ایچ ایس بی سی کا 25 ہزار ملازمتیں ختم کرنے کا اعلان

Image caption ایچ ایس بی سی اپنے تقریباً دس فیصد ملازمین کو فارغ کرنے کا ارادہ رکھتا ہے

یورپ میں کام کرنے والے سب سے بڑے بینک ایچ ایس بی سی نے دنیا بھر میں اپنے دفاتر سے 25 ہزار ملازمتیں ختم کرنے کا اعلان کیا ہے۔

بینک کا کہنا ہے کہ ان میں سے آٹھ ہزار ملازمتیں برطانیہ سے ختم ہوں گی اور ان اقدامات کا مقصد اخراجات میں کمی اور کاروبار کو سادہ بنانا ہے۔

اس کٹوتیوں سے ریٹیل اور انویسٹمنٹ دونوں قسم کی بینکاری متاثر ہوگی۔

25 ہزار نوکریاں ختم کرنے کا مطلب یہ ہے کہ ایچ ایس بی سی اپنے دو لاکھ 66 ہزار ملازمین میں سے تقریباً دس فیصد کو فارغ کر رہا ہے۔

منگل کو بینک کی جانب سے کیے جانے والے اعلان کے مطابق وہ ترکی اور برازیل میں اپنا کاروبار بند بھی کر رہا ہے۔

بینک نے ان اطلاعات کی تصدیق بھی کی ہے کہ وہ اپنے صدر دفتر کو برطانیہ سے باہر لے جانے پر بھی غور کر رہا ہے اور اس بارے میں حتمی فیصلہ سالِ رواں کے آخر تک کر لیا جائے گا۔

تصویر کے کاپی رائٹ hsbc
Image caption بینک کی جانب سے کیے جانے والے اعلان کے مطابق وہ ترکی اور برازیل میں اپنا کاروبار بند بھی کر رہا ہے

غالب خیال یہی ہے کہ بینک اپنا صدر دفتر ہانگ کانگ منتقل کر لے گا۔

بڑے پیمانے پر کٹوتیوں کی خبر ایک ایسے وقت سامنے آئی ہے جب بینک کے چیف ایگزیکیٹو سٹوئرٹ گلیور سرمایہ کاروں اور تجزیہ کاروں کو بینک کی مستقبل کی حکمتِ عملی کے بارے میں بریفنگ دینے والے ہیں۔

انھوں نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ’ہم نے تسلیم کیا ہے کہ دنیا بدل چکی ہے اور ہمیں اس کے ساتھ بدلنا ہوگا۔ اسی لیے ہم ان سٹریٹیجک اقدامات پر عمل کر رہے ہیں جو ہمارے ادارے کو مزید بدلیں گے۔‘

ان اقدامات کے نتیجے میں بینک سالانہ پانچ ارب ڈالر بچت کرنے کی کوشش کرے گا اور انویسٹمنٹ بینکنگ میں بھی کٹوتیاں کی جائیں گی۔

اسی بارے میں