’دولتِ اسلامیہ کے جنگجو کوبانی میں دوبارہ داخل ہو گئے‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption کرد جنگجوؤں نے چار ماہ تک جاری رہنے والی لڑائی کے بعد رواں برس جنوری میں کوبانی سے دولتِ اسلامیہ کے جنگجوؤں کو مار بھگایا تھا

شام سے ملنے والی اطلاعات کے مطابق شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ کے جنگجوؤں نے سرحدی شہر کوبانی پر دوبارہ قبضہ کرنے کے لیے حملے کیے ہیں۔

ان حملوں کا آغاز شام اور ترکی کی سرحد پر واقع شہر کے قریب ایک خودکش کار بم دھماکے سے ہوا۔

شام میں حقوقِ انسانی پر نظر رکھنے والی ایک تنظیم نے دعویٰ کیا ہے کہ کوبانی کے مرکزی علاقے میں دولتِ اسلامیہ اور کرد فورسز کے جنگجوؤں کے مابین شدید لڑائی ہو رہی ہے۔

ایسی اطلاعات بھی ہیں کہ دولتِ اسلامیہ کے جنگجو شمال مشرقی شام میں حصاکہ نامی شہر میں بھی داخل ہوئے ہیں اور حکومتی افواج سے شہر کے دو اہم حصوں کا کنٹرول چھین لیا ہے۔

دی سیریئن آبزرویٹري فار ہیومن رائٹس کا کہنا ہے کہ کوبانی میں جاری شدید لڑائی میں متعدد افراد مارے گئے ہیں۔

کرد جنگجوؤں نے امریکی فضائیہ کے حملوں کی مدد سے چار ماہ تک جاری رہنے والی لڑائی کے بعد رواں برس جنوری میں کوبانی سے دولتِ اسلامیہ کے جنگجوؤں کو مار بھگایا تھا۔

کوبانی سے دولتِ اسلامیہ کے انخلا کو ایک علامتی شکست کے طور پر دیکھا گیا تھا اور کوبانی سے نکلنے کے بعد انھیں کرد جنگجوؤں کے ہاتھوں کئی دیگر محاذوں پر بھی شکست کا سامنا کرنا پڑا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption شام اور ترکی کی سرحد پر واقع کوبانی جنگ کے نتیجے میں تباہ ہو چکا ہے

رواں ہفتے ہی كردش پاپولر پروٹیکشن یونٹس کی افواج نے دولتِ اسلامیہ کا گڑھ سمجھے جانے والے علاقے رقہ کے نزدیک واقع اہم قصبے عین العیسیٰ اور فوجی اڈے پر قبضے کا دعویٰ کیا تھا۔

اس سے پہلے کرد افواج نے تل ابیض پر قبضہ کر کے دولتِ اسلامیہ کی فوج کی رسد کا راستہ بھی بند کر دیا تھا۔

سیریئن آبزرویٹري فار ہیومن رائٹس کے ڈائریکٹر رمی عبدالرحمان کا کہنا ہے کہ دولتِ اسلامیہ کے جنگجوؤں نے سرحدی راہگزر کے نزدیک ایک خودکش حملہ کیا جس میں پانچ افراد مارے گئے۔

رمی عبدالرحمان کے مطابق اس دھماکے کے بعد بدھ کو کوبانی شہر کے مرکزی علاقوں میں شدید جھڑپیں شروع ہوگئیں اور گلیاں لاشوں سے اٹ گئیں۔

انھوں نے کہا کہ جھڑپوں کا سلسلہ جمعرات کو بھی جاری ہے۔

تنظیم نے شمال مشرقی شام میں کوبانی سے270 کلومیٹر دور واقع قصبے حصاکہ میں بھی جھڑپوں میں بھاری جانی نقصان کی خبر دی ہے۔

دولتِ اسلامیہ کے جنگجو کئی ماہ سے حصاکہ پر قبضہ کرنے کے لیے کوشاں ہیں۔

کوبانی کی جنگ کو امریکہ کی سربراہی والے اتحاد کے لیے ایک اہم ٹیسٹ کے طور پر دیکھا جا رہا ہے کیونکہ اتحادی طیارے دولتِ اسلامیہ کے ٹھکانوں پر فضائی حملے کر کے اسے پسپا کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

اسی بارے میں