یونانی پارلیمان کی بیل آؤٹ پیکج پر ریفرنڈم کروانے کی حمایت

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption یونان کو دیوالیہ ہونے سے بچانے اور اس کو یورپی اتحاد میں رکھے جانے کی کوششوں میں یورپی یونیئن اور یونان کے کئی اجلاس ہوئے ہیں

یونان کی پارلیمان نےغیر ملکی سرمایہ کاروں کی شرائط کے مطابق بیل آؤٹ ماننے کے لیے ریفرنڈم کروانے کے متنازعہ منصوبے کی حمایت کر دی ہے۔

یونان کی پارلیمان کی جانب سے یہ توثیق ایک ایسے وقت میں کی گئی ہے جب چند ہی گھنٹے قبل یورو زون کے وزرائے خزانہ نے یونان کی جانب سے معاشی بحران سے نکلنے کے لیے دیےجانے والے بیل آؤٹ پیکج کی مدت میں 30 جون کے بعد تک توسیع کرنے کی درخواست مسترد کر دی ہے۔

خیال رہے کہ ایک روز قبل یونان کے وزیراعظم ایلکسس تسیپراس نے اعلان کیا تھا کہ دیوالیہ ہونے سے بچنے کے لیے غیر ملکی سرمایہ کاروں کی جانب سے رکھی گئیں شرائط کو ماننے کے بارے میں ملک میں پانچ جولائی کو ریفرنڈم کرائیں گے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption وزیراعظم ایلکسس تسیپراس نے پانچ جولائی کو ریفرنڈم کروانے کا اعلان کر رکھا ہے

سنیچر کو جب پارلیمان میں ریفرنڈم سے متعلق تحریک پیش کی گئی تو 300 اراکین میں سے 179 نے اس کے حق میں ووٹ ڈالا

دوسری جانب یورو گروپ کے سربراہ جیرون ڈیشیبلوم نے کہا کہ بیل آؤٹ پیکج کے بارے میں بات چیت جمعے کو شروع ہوئی جب یونان نے حیران کن طور پر دیوالیہ پن سے بچنے کے لیے غیر ملکی سرمایہ کاروں کی جانب سے رکھی گئیں شرائط کو ماننے کے بارے میں ریفرینڈم کرانے کا اعلان کیا۔

انھوں نے کہا کہ یونان نے یہ اعلان کر کے بات چیت کے عمل کو ختم کر دیا تھا۔

یونان مالی بحران میں کیسے پھنس گیا؟

جیرون ڈیشیبلوم کے مطابق وزرائے خزانہ دوبارہ ملیں گے تاکہ نئے پیش آنے والے واقعات کے نتائج پر بات چیت کی جا سکے۔

ادھر عالمی مالیاتی ادارے آئی ایم ایف کی سربراہ کرسٹینا لوگارٹ نے بی بی سی سے گفتگو میں کہا ہے کہ یونان کی حکومت کی جانب سے بیل آؤٹ پیکج کے حوالے سے ریفرنڈم کا منصوبہ منگل کے بعد سے غیر موثر ہو جائے گا۔

ان کا کہنا تھا کہ لوگ ان تجاویز اور انتظامات کے بارے میں ووٹ دیں گے جن کا وجود ہی نہیں رہے گا۔

تاہم ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ یونان کے لیے اب بھی موقع ہے کہ وہ یورو زون کی تجاویز تسلیم کرنے کے لیے اپنے ذہن کو بدلے۔

یونانی وزیراعظم ایلکسس تسیپراس ملک میں پچھلی حکومت کے دوران مفلوج کر دینے والی کٹوتیوں اور سماجی بہبود کی سہولیات کے خاتمے کے خلاف اقدامات کے وعدے پر اقتدار میں آئے تھے اور ان کا مطالبہ رہا ہے کہ یونان پر واجب الادا قرضوں کی ادائیگی میں سہولت ملنی چاہیے۔

انھوں نے غیر ملکی سرمایہ کاروں کی جانب سے اصلاحات کے بدلے میں یونان کے بیل آؤٹ پیکج میں پانچ ماہ کی توسیع کی پیشکش کو مسترد کر دیا تھا۔

خیال رہے کہ یونان کو عالمی مالیاتی اداروں اور مشترکہ کرنسی یورو کے رکن ملکوں سے تقریباً سوا سات ارب یورو کے ہنگامی قرض کی ضرورت ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption یونان کا مجموعی قرض اُس کی مجموعی سالانہ قومی پیداوار کے دگنے کے لگ بھگ ہے

اگر جون کے اختتام سے پہلے یہ قرض نہ ملا تو یونان ڈیڑھ ارب یورو سے زیادہ مالیت کے پرانے قرض عالمی مالیاتی اداروں کو واپس ادا نہیں کر پائے گا۔

قرض کی ادائیگی میں ناکامی کا مطلب دیوالیہ پن ہو گا جس کے باعث یونان کو یورو کی مشترکہ کرنسی سے خارج کر دیا جائے گا جو یورپی اتحاد سے اخراج پر بھی منتج ہو سکتا ہے۔

یونان کو دیوالیہ ہونے سے بچانے اور اس کو یورپی اتحاد میں رکھے جانے کی کوششوں میں یورپی یونین اور یونان کے کئی اجلاس ہوئے ہیں۔

ان مذاکرات میں یونان نے امیروں اور کاروباری اداروں پر نئے ٹیکسوں سمیت سمجھوتے کے لیے نئی تجاویز پیش کی تھیں۔

یونان کا مجموعی قرض اُس کی مجموعی سالانہ قومی پیداوار کے دگنے کے لگ بھگ ہے اور ماہرین کے بقول اگر اُسے ادائیگی میں سہولت نہ ملی تو یونان کے لیے ہر کچھ عرصے بعد نئے قرضوں کے حصول کے چکر سے نکلنا مشکل ہو گا۔