’کویت میں مسجد پر خودکش حملہ سعودی شہری نے کیا‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption وزرات داخلہ نے خودکش حملہ آور کی شناخت سلیمان عبدالمحسن القعبہ کے نام سے کی ہے

کویت میں حکام کا کہنا ہے کہ شیعہ مسلک سے تعلق رکھنے والی مسجد پر خودکش حملہ سعودی شہری نے کیا۔

اتوار کو کویت کے سرکاری ذرائع ابلاغ کے مطابق وزرات داخلہ نے خودکش حملہ آور کی شناخت سلیمان عبدالمحسن القعبہ کے نام سے کی ہے۔ حکام کا کہنا ہے کہ مشتبہ شخص جمعے کو مسجد پر حملے سے کچھ دیر قبل ہی کویت پہنچا تھا۔

جمعہ کو کویت میں شیعہ مسلک سے تعلق رکھنے والے افراد کی مسجد پر حملے میں کم سے کم 27 افراد ہلاک ہوئے تھے۔ دولتِ اسلامیہ نے، جو شیعہ مسلمانوں کو بدعتی قرار دیتی ہے، مسجد پر حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔

گذشتہ مہینے سعودی عرب میں کام کرنے والی دولتِ اسلامیہ کی شاخ نے دو مسلسل جمعوں کو شیعہ مساجد پر حملے کیے تھے۔

عرب امور کے لیے بی بی سی کے ایڈیٹر سیبسٹیئن کہتے ہیں کہ یہ حملے خلیج میں جہادیوں کے بڑھتے ہوئے خطرے کو مزید قریب لے آئے ہیں۔

جمعہ کو کویت شہر میں اہلِ تشیع کی مسجد امام صادق میں ہونے والے حملے میں دو سو سے زیادہ افراد زخمی ہوئے تھے۔ کویت کی حالیہ تاریخ میں شیعہ مسلمانوں پر ہونے والا یہ سب سے خوں ریز حملہ ہے۔

کویت میں حکام کہتے ہیں کہ مشتبہ سعودی حملہ آور غیر قانونی طور پر کویت میں داخل ہوا تھا۔

اس حملے کے بعد کئی افراد کو گرفتار کر لیا گیا ہے جن میں اس کار کا مالک اور ڈرائیور بھی شامل ہے جس میں بیٹھ کر خود کش بمبار حملہ کرنے کے لیے مسجد پہنچا تھا۔

حکام نے اس مکان کے مالک کو بھی پکڑ لیا ہے جس میں خودکش بمبار گیا تھا۔ وزارتِ داخلہ کا کہنا ہے کہ ابتدائی تفتیش سے پتہ چلا ہے کہ بمبار ’انتہا پسند اور عام روش سے بھٹکے ہوئے نظریات‘ کا حامل تھا۔

بی بی سی کے نامہ نگار کہتے ہیں کہ اگرچہ خلیج کی کئی ریاستیں باہم متصادم رہتی ہیں لیکن دولتِ اسلامیہ سے نمٹنے کے لیے وہ اکٹھی ہیں۔

شام اور عراق میں دولتِ اسلامیہ کے خلاف لڑائی کے لیے سبھی ریاستیں امریکہ کی زیرِ قیادت اتحادی افواج کا حصہ ہیں۔ تاہم انھوں نے اپنی شرکت کو زیادہ نمایاں نہیں ہونے دیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption دولتِ اسلامیہ خلیج میں سنی اور شیعہ فرقوں کے درمیان کشیدگیاں بڑھانا چاہتی ہے

ہمارے نامہ نگاروں کے مطابق صاف لگتا ہے کہ دولتِ اسلامیہ خلیج میں سنی اور شیعہ فرقوں کے درمیان کشیدگیاں بڑھانا چاہتی ہے۔

خطے میں کویت ان ممالک میں شامل ہے جہاں شیعہ مسلمان تعداد میں سب سے زیادہ ہیں لیکن وہاں سعودی عرب اور بحرین کی طرح فرقہ وارانہ ٹکراؤ ابھر کر سامنے نہیں آیا ہے۔

اسی بارے میں