یونان آئی ایم ایف کو قرض کی قسط ادا نہیں کر سکا

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption یونانی وزیرِ اعظم نے واضح کیا کہ اگر یونانی ووٹروں نے ان کے منصوبوں کو رد کر دیا تو وہ مزید کٹوتیوں سے قبل ہی مستعفی ہو جائیں گے

یونان کی طرف سے بین الاقوامی مالیاتی ادارے آئی ایم ایف سے لیےگئے قرض کی قسط کی ادائیگی کی حتمی مدت ختم ہو گئی ہے جبکہ یونان نے مہلت ختم ہونے سے پہلے یورو زون سے 29.1 ارب یورو کے بیل آؤٹ پیکیج کی درخواست کی تھی۔

منگل کو گرینچ کے معیاری وقت کے مطابق رات دس بجے کے بعد آئی ایم ایف نے اس بات کی تصدیق کی کہ یونان قرض کی ادائیگی میں ناکام رہا ہے۔

آئی ایم ایف کے ترجمان گیری رائس نے کہا: ’ہم نے اپنے ایگزیکٹیو بورڈ کو اطلاعات فراہم کر دی ہیں کہ یونان کو اس وقت تک آئی ایم ایف کی جانب سے کوئی مالی تعاون نہیں دیا جائے گا جب تک کہ وہ بقایا رقم نہیں ادا کر دیتا۔‘

انھوں نے اس بات کی بھی تصدیق کی کہ یونان کی جانب سے آخری لمحات میں قرض کی ادائيگی کی مدت میں توسیع کی درخواست کی گئی ہے۔ انھوں نے کہا کہ اسے ’مناسب موقعے پر‘ بورڈ کے سامنے پیش کیا جائے گا۔

یونان نے 30 جون تک آئی ایم ایف کو 1.1 ارب یورو کی قسط ادا کرنی تھی لیکن اب وہ پہلا ترقی یافتہ ملک بن گیا ہے جو آئی ایم ایف کا نادہندہ بن گیا ہے۔

مہلت ختم ہونے سے پہلے یونان نے دو سال کے لیے 29.1 ارب یورو کی نئے بیل آؤٹ پیکیج کی درخواست کی تاکہ سنہ2017 تک اپنے قرض کی قسطیں ادا کر سکے۔

ادھر یونانی وزیر اعظم ایلکسس تسیپراس آئی ایم ایف کے قرض کی ادائیگی کے لیے یورپی یونین سے قرض لینے کے ساتھ وابستہ کفایت شعاری کی شرائط ماننے سے انکار کر رہے ہیں اور انھوں نے دھمکی دی ہے کہ اگر یونانی عوام نے ریفرینڈم میں کفایت شعاری کی تجاویز ماننے کے حق میں ووٹ دیا تو وہ اپنے عہدے سے مستعفیٰ ہو جائیں گے۔

یونان کے وزیرِ اعظم کا کہنا تھا کہ یونانی عوام کا واضح جواب ہی ملک کے بیرونی قرضوں کے بحران کے موافق حل کے سلسلے میں ان کی مدد کر سکتا ہے۔

پیر کی شب یونانی ٹی وی پر ایک انٹرویو میں ایلکسس تسیپراس نے کہا کہ اتوار کو ریفرینڈم میں عوام کی جانب سے ’نفی‘ کا ووٹ ان کی حکومت کو قرض کے معاملے پر بات چیت کے دوبارہ آغاز کے لیے بہتر پوزیشن دے سکتا ہے۔

یونان کو دیوالیہ ہونے سے بچانے کے لیے غیر ملکی سرمایہ کاروں کی جانب سے رکھی گئی شرائط تسلیم کرنے یا نہ کرنے کے بارے میں ملک میں پانچ جولائی کو ریفرینڈم منعقد ہو رہا ہے۔

تاہم انھوں نے یہ بھی واضح کیا کہ ووٹروں نے ان کے منصوبوں کو رد کر دیا تو وہ مزید کٹوتیوں سے قبل ہی مستعفی ہو جائیں گے۔

ایلکسس تسیپراس نے کہا کہ ’اگر یونانی عوام کفایت شعاری کے منصوبے جاری رکھنا چاہتے ہیں تو ایسی صورت میں ہم سر اٹھانے کے قابل نہیں رہیں گے مگر ان کی خواہش کا احترام کریں گے لیکن وہ ہم نہیں ہو گے جو یہ اقدامات کریں گے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption یونان کے دیوالیہ ہونے کا خطرہ ہے اور ممکن ہے کہ وہ یورو زون کے 19 ممالک کا حصہ نہ رہے

یونانی وزیرِ اعظم کا یہ بھی کہنا تھا کہ یونان کے قرض خواہ یہ نہیں چاہتے کہ ملک دیوالیہ ہو یا یورو زون سے نکال دیا جائے۔ ان کا کہنا تھا کہ ’وہ ہمیں یورو زون سے باہر نہیں نکالیں گے کیونکہ ایسا کرنے کی انھیں بہت بڑی قیمت ادا کرنا پڑے گی۔‘

ادھر یورپی یونین کے رہنماؤں نے یونان کو خبردار کیا ہے کہ اگر قرض خواہوں کی تجاویز مسترد کر دی گئیں تو اس کا مطلب یونان کا یورو زون سے اخراج ہو گا۔

تاہم جرمنی کے وزیر خزانہ سیگمار گیبریئل نے کہا ہے کہ ووٹ کا مطلب ’یورو زون کو ہاں یا نہ‘ کہنا ہو گا۔

جرمنی کے وزیر خزانہ کے علاوہ یورو زون کی دیگر دو بڑی معاشی طاقتوں کے رہنماؤں کے مطابق یونان کی عوام کو ریفرینڈم میں موثر طریقے سے اس بات کو طے کرنا ہو گا کہ وہ یورو زون میں رہنا چاہتے ہیں یا نہیں۔

اٹلی کے وزیراعظم ماتیو رینتسی کا کہنا ہے کہ ریفرینڈم یورو اور یونان کی پرانی سرکاری کرنسی کے درمیان انتخاب ہو گا جبکہ فرانس کے صدر فرانسوا اولاند نے کہا ہے کہ’ اس وقت داؤ پر یہ لگا ہے کہ آیا یونان یورو زون میں رہنا چاہتا ہے۔‘

برطانوی وزیر خزانہ جارج اوسبورن نے کہا ہے کہ یونان کا انخلا صدمے کا باعث ہو گا اور برطانیہ اس کے اثرات کو ہلکا نہیں لینا چاہیے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption یونانی پارلیمان نے غیر ملکی سرمایہ کاروں کی جانب سے رکھی گئی شرائط کو ماننے کے لیے ریفرینڈم کی حمایت کی ہے

یونان کو دیوالیہ پن سے بچانے کے لیے بیل آؤٹ پیکیج پر یورپی ممالک اور عالمی مالیاتی ادارے (آئی ایم ایف) کے درمیان ہفتہ بھر جاری رہنے والے مذاکرات کسی معاہدے پر پہنچنے میں ناکام رہے تھے۔

ان مذاکرات کی ناکامی اور یورپی سینٹرل بینک کی جانب سے ہنگامی امدادی فنڈ میں اضافہ نہ ہونے کی وجہ سے یونانی حکومت پہلے ہی ملک کے تمام بینک ایک ہفتہ تک بند رکھنے کا اعلان کر چکی ہے۔

حکومت کی جانب سے جاری ہونے والے حکم نامے میں کہا گیا ہے کہ سرمایہ یا نقدی کی قلت کی وجہ سے ملک کے مالیاتی نظام کو بچانے کے لیے یہ ’انتہائی ضروری‘ اقدام ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service

حکم نامے کے مطابق یونانی بینکوں کے اے ٹی ایم سے بھی ایک دن میں زیادہ سے زیادہ 60 یورو تک ہی رقم نکلوائی جا سکتی ہے۔

اسی بارے میں