اب ہم یونانی حکام کی جانب سے پہل کے منتظر ہیں: یورپی یونین

تصویر کے کاپی رائٹ Getty images
Image caption یورپی سینٹرل بینک یونان کے بینکوں کو ہنگامی رقوم فراہم کرنے یا نہ کرنے کے فیصلے پر غور کر رہا ہے

یونان میں بیل آؤٹ پیکیج پر ریفرینڈم میں قرض دہندگان کی تجاویز مسترد کرنے کے بعد یورو زون کے وزرائے خزانہ کا کہنا ہے کہ ان کو توقع ہے کہ یونان قرضے کی ادائیگی کے حوالے سے نئی تجاویز پیش کرے گا۔

یورپی کمیشن کے صدر ژاں کلود یُنکر نے ریفرینڈم کے نتائج کو ’یونان کے لیے قابلِ مذمت‘ قرار دیا۔

یورو زون کے وزرائے خزانہ نے یونان کے معاملے پر منگل کو ہنگامی اجلاس بلایا ہے۔

یونانی عوام کی ’نہ‘ کے بعد وزیرِ خزانہ مستعفی

یونان میں ’نہ‘ کا جشن

اس سے قبل یونان کے وزیرِ خزانہ یانس واروفاکس نے یہ کہتے ہوئے اپنا عہدہ چھوڑ دیا کہ عالمی مذاکرات کار یونان کی جانب سے انھیں مذاکراتی ٹیم میں دیکھنے کے خواہاں نہیں۔

اسی دوران یورپی سینٹرل بینک یونان کے بینکوں کو ہنگامی رقوم فراہم کرنا یا نہ کرنے کے فیصلے پر غور کر رہا ہے۔ یونان کے بینکوں کے پاس سرمایہ ختم ہو رہا ہے اور وہ دیوالیہ ہونے کے قریب ہیں۔

یورپی کمیشن کے صدر نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ ’یونان کی معیشت میں بہتری کے لیے سخت شرائط اور اصلاحات ناگزیر ہیں۔ اب ہم یونانی حکام کی جانب سے پہل کے منتظر ہیں۔‘

جرمنی کی چانسلر انگیلا میرکل کے ترجمان کا کہنا ہے کہ فی الوقت کسی نئے بیل آؤٹ پیکیج پر بات کرنے کا کوئی ’جواز‘ نہیں بنتا اور اس بارے میں فیصلہ یونان کو کرنا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption وزارت داخلہ کی جانب سے جاری کیے گئے ریفرینڈم کے حتمی نتائج کے مطابق ’نہ‘ کو 61.3 فیصد ووٹ ملے ہیں

جرمن چانسلر کے ترجمان نے کہا کہ ’یہ اب یونان پر منحصر ہے کہ وہ کیا کرتا ہے۔ ہم انتظار کر رہے ہیں کہ یونانی حکومت اپنی یورپی ساتھیوں کے سامنے کیا تجاویز پیش کرتی ہیں۔‘

چانسلر میرکل پیر کو فرانسیسی صدر فرانسوا اولاند سے بھی پیرس میں ملاقات کریں گی۔

برسلز میں یورپی کمیشن کے نائب صدر نے پریس کانفرنس میں بتایا یورپی کمیشن کے صدر نے کہا ہے کہ یونان کی حکومت کو عوام کو ممکنہ نتائج سے آگاہ کرنے کے لیے ’ذمہ داری اور ایمان داری‘ کا مظاہرہ کرنا چاہیے۔

انھوں نے کہا کہ ریفرینڈم میں ’نہ‘ کے حق میں ووٹ دینے سے یورو زون میں شامل ممالک اور یونان کے درمیان فاصلے بڑھ گئے ہیں۔

’بحران سے نکلنے کا کوئی آسان حل نہیں ہے۔ بہت سا وقت اور کئی مواقع پہلے ہی ضائع ہو گئے ہیں۔‘

یورپی کمیشن کے نائب صدر نے کہا کہ اس سب کے باوجور یورو زون کے استحکام پر کوئی سوال نہیں اٹھائے جائیں۔’ہمارے پاس سب کچھ ہے اور ہمیں حالات کو بہتر کرنا چاہیے۔‘

یونان کے وزیر اقتصادیات نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ یورپی سینٹرل بینک کو آئندہ سات سے دس دنوں تک یونان کے بینکوں کو رقوم فراہم کرنی چاہییں تاکہ اس دوارن بات چیت جاری رہ سکے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption یونان کے وزیر اقتصادیات نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ یورپی سینٹرل بینک کو آئندہ سات سے دس دنوں تک یونان کے بینکوں کو رقوم فراہم کرنی چاہیے

یونان گذشتہ ہفتے آئی ایم ایف سے لیے گئے قرض کی ایک ارب 60 کروڑ ڈالر کی قسط ادا کرنے میں ناکام رہا تھا جبکہ یورپی سینٹرل بینک کی ہنگامی فنڈنگ بند ہونے کے بعد زیادہ تر یونانی بینک گذشتہ پیر کو بند کر دیے گئے تھے۔

اس کے علاوہ کیش مشینوں سے ایک دن میں صرف 60 یورو تک ہی نکالے جا سکتے ہیں، البتہ پینشنر 120 یورو تک نکال سکتے ہیں۔

اسی بارے میں