حلب میں بم دھماکے سے تاریخی قلعے کو نقصان

حلب کا تاریخی قلعہ تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption 13ویں صدی میں بنائے گئے قلعے سے پرانے حلب شہر کو دیکھا جا سکتا ہے

شام کے شہر حلب میں ایک بم دھماکے کی وجہ سے شہر کے ایک قدیم قلعے کی دیواریں گر گئی ہیں۔

13 ویں صدی میں بننے والے قلعے سے حلب کے پرانے شہر کو دیکھا جا سکتا ہے اور اسے اقوامِ متحدہ کی طرف سے عالمی ورثہ قرار دیا گیا ہے۔

شامی فوجیں اس قلعے کو ایک فوجی چوکی کے طور پر استعمال کرتی رہی ہیں۔

گذشتہ تین برسوں سے حکومت اور باغی فورسز کے درمیان شہر کے کنٹرول کے لیے لڑائی ہو رہی ہے۔

ابھی تک نہیں پتہ چلا کہ کس طرف سے چلائے گئے بم سے قلعے کو نقصان پہنچا ہے۔

زمینی جنگ اور حکومتی فورسز کے فضائی حملوں کی وجہ ہزاروں افراد مر چکے ہیں اور پرانا شہر بھی تقریباً 60 فیصد کے قریب تباہ ہو چکا ہے۔

برطانیہ میں مقیم مانیٹرنگ گروپ دی سیریئن آبزرویٹری فار ہیومن رائٹس نے کہا ہے کہ یہ دھماکہ اتوار کی صبح ہوا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption شام کی خانہ جنگی سے پہلے قلعے کا ایک منظر

گروپ کے سربراہ رامی عبدالرحمٰن نے کہا ہے کہ دھماکے کی وجہ سے قلعے کی دیوار کا کچھ حصہ گر گیا ہے۔

حکومت کا کہنا ہے کہ باغی جنگجوؤں نے قلعے کے نیچے سرنگ کھود کر اس میں بم لگا دیا تھا۔

سرنگوں میں بم لگانا باغیوں کا ایک جنگی حربہ بن چکا ہے۔

جولائی کے آغاز سے باغی گروپوں نے صدر بشار الاسد کے فوجیوں کے خلاف اہم حملہ شروع کیا ہوا ہے۔

مارچ 2011 سے صدر بشار الاسد کے خلاف شروع ہونے والی بغاوت کے بعد ہونے والی خانہ جنگی میں 230,000 سے زیادہ افراد ہلاک ہو چکے ہیں اور تقریباً 11.5 ملین افراد جو کہ کل آبادی کا نصف سے زیادہ ہے اپنے گھروں کو چھوڑ کر جا چکے ہیں۔

اسی بارے میں