ایران کے ساتھ جوہری معاہدہ ’واحد قابل عمل راستہ‘ تھا: جان کیری

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption جمعرات کو کمیٹی کے سامنے وزیرِ خارجہ جان کیری کے ہمراہ وزیرِ خزانہ جیک لیئو اور وزیرِ تونائی ارنیسٹ موئز پیش ہوئے

امریکی وزیرِ خارجہ جان کیری نے سینیٹ کی کمیٹی برائے خارجہ امور سامنے ایران کے ساتھ جوہری معاہدے کا دفاع کرتے ہوئے اسے مسئلے کے پرامن کا ’واحد قابل عمل راستہ‘ قرار دیا ہے۔

جمعرات کو کمیٹی کے سامنے وزیرِ خارجہ جان کیری کے ہمراہ وزیرِ خزانہ جیک لیئو اور وزیرِ تونائی ارنیسٹ موئز پیش ہوئے۔ جان کیری نے کمیٹی کو بتایا؛ ‘ہمیں (ایران کو) جوہری ہتھیاروں سے دور رکھنا تھا اور ہم نے یہ حاصل کر لیا ہے۔‘

امریکی کانگریس کے پاس اس معاہدے کا جائزہ لینے کے لیے دو ماہ کی مدت ہے۔

کانگریس کے دونوں ایوانوں میں رپبلکن پارٹی اکثریت میں ہے اور رپبلکن اراکین اس معاہدے کی مخالفت کرتے ہیں۔

توقع کی جا رہی ہے کہ آئندہ ہفتوں میں کانگریس کے جائزے کے دوران جان کیری سے اس معاہدے میں موجود شرائط کے بارے میں سخت سوالات کیے جائیں گے۔

دوسری جانب ایرانی صدر بھی جوہری معاہدے کا دفاع کر رہے ہیں۔

صدر حسن روحانی نے ٹی وی براہ راست نشر کیے جانے والے اپنے خطاب میں کہا کہ یہ معاہدہ ‘تاریخ کا ایک نیا صفحہ‘ ہے اور ایران کے عوام کی خواہش یہی چاہتے تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption ایرانی صدر بھی جوہری معاہدے کا دفاع کر رہے ہیں

جان کیری نے قائمہ کمیٹی کوبتایا کہ امریکی انتظامیہ مذاکرات کی میز پر اس واضح مقصد کے ساتھ آئی تھی کہ جوہری ہتھیاروں کے مسئلے پر بات چیت کی جائے گی۔

ان کا کہنا تھا کہ ایران نے جوہری پروگرام کو مکمل طور ختم کرنے کے اسرار کرنا بے مقصد تھا کیونکہ ایران کے پاس ١٠ سے ١٢ ایٹم بم بنانے کے لیے ٹیکنالوجی اور مواد موجود ہے۔

ان کا کہنا تھا؛ ‘ہمارے پاس یہی راستہ تھا کہ ہم اس بات کو یقینی بنائیں کہ ایران کا جوہری پروگرام محدود اور مکمل طور پر پرامن ہے یا کوئی معاہدہ نہیں ہوسکتا۔

ایران اور چھ عالمی قوتوں امریکہ، برطانیہ، فرانس، روس، جین اور جرمنی کے درمیان ہونے والے معاہدے کے مطابق ایران اپنے جوہری پروگرام کو محدود کرے گا جس کے عوض اس کے خلاف پابندیوں میں بھی کمی کی جائے گی۔

عالمی طاقتوں کا یہ خدشہ تھا کہ ایران اپنے جوہری پروگرام کے ذریعے جوہری ہتھیار حاصل کر رہا ہے جبکہ تہران کا ہمیشہ سے یہ موقف رہا ہے کہ اس کا جوہری پروگرام پرامن مقاصد اور توانائی کے حصول کے لیے ہے۔

جب تک کانگریس اس معاہدے کا جائزہ لے رہی ہے تب تک ایران پر سے پابندیاں ہٹائی نہیں جا سکتیں اور ایران پر جلد جلد پابندیاں بھی 17 ستمبر تک ہی ہٹائی جا سکتی ہیں۔

اسی بارے میں