شامی کردوں کی’ترکی کی بمباری کی مذمت‘

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption وائی پی جی کے مطابق کوبانی کے قریب اس کی ایک گاڑی کو بھی ترک افواج نے نشانہ بنایا ہے

شام میں کرد افواج نے الزام عائد کیا ہے کہ ترکی سرحد سے متصل علاقوں میں انھیں نشانہ بنا رہا ہے جبکہ ترکی نے ان الزامات کی تحقیقات کرنے کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ شام میں کرد افواج اس کے حالیہ فوجی اہداف میں شامل نہیں۔

ترکی شام میں شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ اور عراق میں کرد جنگجوؤں’ پے کے کے‘ کے خلاف فضائی حملے کر رہا ہے تاہم اس کا یہ بھی کہنا ہے کہ وہ شام میں زمینی افواج بھیجنے کا ارادہ نہیں رکھتا۔

شام میں زمینی فوج بھجوانے کا ارادہ نہیں: ترک وزیراعظم

ترکی نے نیٹو ممالک کا اجلاس طلب کر لیا

شام میں کرودش پارٹی ( پی فائی ڈی ) کے مسلح ونگ کرودش پیپلز پروٹیکشن یونٹ (فائی پی جی ) کا کہنا ہے کہ اتوار کی شب ترکی کے ٹینکوں نے شام کے دیہات زورمیکار پر بمباری کی۔

وائی پی جی کے مطابق کوبانی کے قریب اس کی ایک گاڑی کو بھی ترک افواج نے نشانہ بنایا ہے۔

پیر کو گروہ کی جانب سے جاری کیے گئے بیان میں کہا گیا ہے کہ ’دولتِ اسلامیہ کے دہشت گردو کو نشانہ بنانے کے بجائے ترک افواج ہماری پوزیشنوں کو نشانہ بنا رہی ہے۔ ہم ترکی قیادت پر زور دیتے ہیں کہ ہمارے خلاف جارحیت بند کی جائے۔‘

دوسری جانب ترکی کے ایک سرکاری اہلکار نے کہا ہے کہ فوجی کارروائی کا مقصد خطے میں موجود ترکی کی سلامتی کے دشمنوں کو نشانہ بنانا ہے اور اسی لیے شام میں داعیش اور عراق میں پی کے کے کو نشانہ بنایا جا رہا ہے۔

’ ہم اس دعوے کی تحقیق کر رہے ہیں کہ شام میں داعیش کے علاوہ دیگر گروہوں کو ترک افواج نے نشانہ بنایا ہے۔ پی وائی ڈی اور شام میں موجود دیگر گروہ ہماری موجودہ فوجی کارروائی کا حدف نہیں ہیں۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ترکی نے حالیہ حملوں کے بعد شام میں دولتِ اسلامیہ اور شمالی عراق میں پی کے کے کی پناہ گاہوں کے خلاف فضائی کارروائی شروع کر رکھی ہے

واضع رہے کہ ترکی کے وزیراعظم احمد داؤد اوغلو نے اس سے پہلے ایک بیان میں کہا تھا کہ شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ اور کرد علیحدگی پسند تنظیم’پی کے کے‘ کے خلاف فضائی حملے ’علاقائی صورتحال تبدیل‘ کر سکتے ہیں۔

تاہم احمد داؤد اوغلو نے واضح کیاتھا کہ ترکی کا شام میں زمینی فوج بھجوانے کا کوئی ارادہ نہیں اور وہ شام میں دولتِ اسلامیہ کے خلاف لڑنے والے باغیوں کی مدد کے لیے فضائی حملے کر رہے ہیں۔

خیال رہے کہ منگل کو برسلز میں نیٹو کے سفیروں کا اجلاس بھی منعقد ہوگا۔

ترکی نے شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ اور علیحدگی پسند کرد تنظیم ’پی کے کے‘ کے خلاف جاری عسکری آپریشن کے جائزے کے لیے نیٹو ممالک کے سفیروں کا اجلاس طلب کیا ہے۔

یاد رہے کہ ترکی نے حالیہ حملوں کے بعد شام میں دولتِ اسلامیہ اور شمالی عراق میں پی کے کے کی پناہ گاہوں کے خلاف فضائی کارروائی شروع کر رکھی ہے۔

اسی بارے میں