یمنی فوج کا فوجی اڈے پر دوبارہ قبضے کا دعویٰ

تصویر کے کاپی رائٹ reuters
Image caption العند نامی فوجی اڈا امریکی فوج کے زیرِ استعمال تھا جہاں سے القاعدہ پر ڈرون حملوں کی نگرانی کی جاتی تھی

یمن میں حکومت کی حامی افواج نے باغیوں سے اپنے سب سے بڑے ہوائی اڈے کا قبضہ واپس لینے کا دعویٰ کیا ہے۔

یہ بات حکومت کی اتحادی فوج کے ترجمان نے بی بی سی سے گفتگو میں بتائی ہے۔

’عدن پر یمنی فوج کا قبضہ‘

عدن شہر کے شمال میں واقع العند نامی فوجی اڈے پر حالیہ دنوں میں شدید لڑائی کے نتیجے میں بڑی تعداد میں ہلاکتوں کی اطلاعات موصول ہوئی ہیں۔

یمنی فوج کو اس جنگ میں سرحد پار سے سعودی فضایہ کی مدد حاصل رہی جس کے نتیجے میں جولائی میں حوثی باغیوں سے عدن شہر کا کنٹرول واپس لینا ممکن ہوا۔

یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ العند نامی فوجی اڈا امریکی فوج کے زیرِ استعمال تھا جہاں سے القاعدہ پر ڈرون حملوں کی نگرانی کی جاتی تھی۔

رواں سال مارچ میں جب حوثی باغیوں نے پیش قدمی کی تو اس دوران اس فوجی اڈے پر بھی انھوں نے قبضہ کر لیا تھا۔ اس وقت ملک کے صدر منصور ہادی کو بھی وہاں سے فرار ہونا پڑا تھا۔

فضائی حصار

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption سعودی عرب کا دعویٰ ہے کہ ایران حوثی باغیوں کی پشت پناہی کر رہا ہے

حکومت کی اتحادی فوج کے ترجمان نصر القائد نے بی بی سی کو بتایا کہ العند کا فوجی اڈا اب صدر ہادی کے فوجیوں کے کنٹرول میں ہے۔

انھوں نے بتایا کہ حکومت کی حامی فوجیں اب بھی اس فوجی اڈے کے اردگرد چار کلومیٹر تک کے علاقے میں موجود باغیوں کے ساتھ لڑ رہی ہیں۔

تاہم دوسری جانب باغیوں نےفوجی اڈے کو یمنی فوج کے قبضے میں واپس لیے جانے کی اطلاع پر کوئی ردِعمل ظاہر نہیں کیا۔

اگر اس پیش رفت کی تصدیق ہو جاتی ہے تو اس سے ملک کے تیسرے بڑے شہر تعز تک زمینی رسائی حاصل کرنے کی راہ میں حائل بڑی رکاوٹ دور ہوجائے گی۔

یمن میں حکومت کی حامی فوج کو سعودی اتحاد کی جانب سے فضائی حصار مہیا کیا جا رہا ہے۔

خیال رہے کہ سعودی عرب کا موقف ہے کہ یمن میں حکومت سے لڑنے والے شیعہ حوثی باغیوں کو ایران کی مدد حاصل ہے۔ تاہم ایران اور حوثی باغی اس کی مخالفت کر رہے ہیں۔

باغیوں کو سابق صدر علی عبداللہ صالح کی حامی فوج کی مدد حاصل ہے۔ وہ کہتے ہیں کہ وہ بدعنوانی کے خلاف اور شمال میں ان کی قوت کے مرکز کو صدر ہادی کی حکومت کی جانب سے غیر اہم بنائے جانے کے اقدامات کے خلاف لڑ رہے ہیں۔

اسی بارے میں