پولینڈ کی جھیل سے دوسری جنگ عظیم کے جہاز کا ملبہ برآمد

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption ’جہاز اس قدر تباہ کن شدہ حالت میں تھا کہ فی الحال اس اس کے ماڈل کا تعین کرنا بہت مشکل ہے‘

پولینڈ میں ایک جھیل سے سوویت یونین کا دوسری جنگِ عظیم کا ایک جہاز کا ملبہ ملا ہے جس کے اندر عملے کی باقیات اب بھی موجود ہیں۔

پولینڈ کے آر ایم ایف ریڈیو کی ویب سائٹ کے مطابق وارسا سے 70 کلو میٹر کے فاصلے پر واقع جھیل میں پانی کی سطح کم ہونے سے جھیل کے کیچڑ میں جہاز کے ٹکڑے کی موجودگی کا انکشاف ہوا۔

اطلاعات کے مطابق عملے کے دو افراد کی باقیات کو جہاز سے ہٹایا جاچکا ہے اور جہاز کے کئی حصے بھی برآمد کرلیے گئے ہیں۔

ویزوگروڈ کے قریب واقع ویسٹولا ریور میوزیئم کے ڈائریکٹر کا کہنا ہے کہ ’جہاز کا وہ تختہ جس پر تمام آلات نصب ہوتے ہیں، انجن، ایک پہیہ اور ایک ریڈیو سیٹ ہمیں مل گیا ہے جو اب بھی اچھی حالت میں موجود ہے۔‘

انھوں نے بتایا کہ ’جہاز اس قدر تباہ کن شدہ حالت میں تھا کہ فی الحال اس اس کے ماڈل کا تعین کرنا بہت مشکل ہے۔‘

ٹی وی پی کی اطلاعات کے مطابق جہاز پر موجود نشانات اور ایک پائلٹ کے موسمِ سرما کے یونیفارم سے اس بات کی تصدیق ہوتی ہے وہ سوویت یونین کے ہوا باز تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption جہاز پر موجود نشانات اور ایک پائلٹ کے موسمِ سرما کے یونیفارم سے اس بات کی تصدیق ہوتی ہے وہ سوویت یونین کے ہوا باز تھے

ویسٹولا ریور میوزیئم کے ڈائریکٹر کے مطابق امکان ہے کہ انھیں جرمنی کی آرٹلری کی جانب سے جنوری 1945 میں نشانہ بنایا گیا ہو جس کے بعد جہاز برفیلے دریا میں غرق ہوگیا۔

مقامی آثارِ قدیمہ کی ایسوسی ایشن اور عجائب گھر کی نگرانی میں اس جگہ کی کھدائی ایک ہفتہ مزید جاری رہے گی۔ مقامی فائر بریگیڈ کی جانب سے بھی ملبے کی کھدائی میں حصہ لیا جارہا ہے اور انھوں نے اپنی ویب سائٹ پر جائے وقوعہ کی تصاویر بھی شائع کی ہیں۔