’ 99 فیصد یقین ہے کہ ویلبرزگ کے قریب دفن ٹرین نازیوں کی ہے‘

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption وزیر نے خزانے کے متلاشی افراد کو بھی خبردار کیا کہ مذکورہ ٹرین ’بوبی ٹریپ‘ ہو سکتی ہے

پولینڈ کی حکومت کے ایک وزیر کا کہنا ہے کہ ریڈار سے زمین کے اندر کی لی گئی تصاویر سامنے آنے کے بعد انھیں 99 فیصد یقین ہے دوسری جنگِ عظیم میں لاپتہ ہو جانے والی نازیوں کی ٹرین ملک کے جنوب مغربی شہر ویلبرزگ کے قریب دفن ہے۔

یہ ٹرین حالیہ پولینڈ کے شہر وارکلو کے قریب لاپتہ ہوگئی تھی جس پر سوویت فوج نے 1945 میں قبضہ کر لیا تھا۔ اس ٹرین کے متعلق افواہ ہے کہ اس پر ٹنوں سونا، جواہرات اور بندوقیں لدی ہوئی تھیں۔

پولینڈ کے نائب وزیرِ ثقافت پیوٹر زکووسکی نے جمعے کو وارسا میں صحافیوں سے بات چیت میں کہا ہے کہ تصاویر میں ایک ایسی ٹرین کو دیکھا جا سکتا ہے جس پر بندوقیں نصب ہیں۔

انھوں نے تازہ ترین ثبوت کو ’غیرمعمولی‘ دریافت قرار دیا۔

پولش وزیر نے اس مقام کی نشاندہی نہیں کی جہاں پر یہ تصاویر لی گئیں۔ انھوں نے کہا ’میں کیسے اصل مقام کے بارے میں بتا سکتا ہوں۔‘

ان کا کہنا تھا کہ اس مقام اور اس کے بارے میں حکام کو آگاہ کرنے والے دونوں افراد کی شناخت خفیہ رکھی جائے گی۔

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption نازیوں نے ویلبرزگ کے قریب میلوں لمبی سرنگیں تعمیر کی تھیں

انھوں نے خزانے کے متلاشی افراد کو بھی خبردار کیا کہ مذکورہ ٹرین ’بوبی ٹریپ‘ ہو سکتی ہے۔

پیوٹر زکووسکی نے کہا کہ انھیں ذاتی طور پر امید ہے کہ اس دریافت سے نازیوں کی جانب سے لوٹے گئے فن پارے اور نوادرات منظرِ عام پر آئیں گے۔

وزیر نے بتایا کہ اس ٹرین کے صحیح مقام کا پتہ اس وقت چلا جب اسے چھپانے کے عمل میں شامل ایک شخص نے بسترِ مرگ پر اس کے بارے میں بتایا۔

رواں ماہ کے آغاز میں ایک پولش اور ایک جرمن شخص نے ویلبرزگ کے حکام کو بتایا تھا کہ وہ اس لاپتہ ٹرین کے مقام سے آگاہ ہیں۔

جنوب مشرقی پولینڈ کی ایک قانونی فرم کے مطابق یہ سُراغ رساں ٹرین میں موجود سامان کا دس فیصد بطور کمیشن چاہتے ہیں۔

اسی بارے میں