سفر کی اجازت نہ ملنے پر تارکینِ وطن کا ہنگری میں احتجاج

تصویر کے کاپی رائٹ c
Image caption ایک ہزار کے قریب پناہ گزیں کیلیتی کے سٹیشن کے باہر جمع ہوئے اور احتجاج کیا

ہنگری کے دارالحکومت بڈاپسٹ میں سینکڑوں تارکینِ وطن نے پولیس کی جانب سے سفر کی اجازت نہ دیے جانے پر شہر کے مرکزی ریلوے سٹیشن کے باہر احتجاج کیا ہے۔

پولیس نے ان افراد کو سفر کرنے سے روکنے کے لیے کیلیتی نامی ریلوے سٹیشن کو بند کر دیا تھا۔

یہ تارکینِ وطن جرمنی جانے کے خواہشمند ہیں اور وہ مظاہرے کے دوران ٹرین کے ٹکٹ لہراتے رہے۔ بڈاپسٹ میں حکام کا کہنا ہے وہ حالات پر قابو پانے کی کوشش کر رہے ہیں۔

ادھر جرمن چانسلر آنگیلا میرکل نے مطالبہ کیا ہے کہ منصفانہ طریقے سے یورپی یونین کے تمام ممالک ان تارکینِ وطن کو پناہ دیں۔

آسٹریا کی پولیس کا کہنا ہے کہ پیر کو ہنگری سے 3650 تارکینِ وطن دارالحکومت ویانا پہنچے ہیں اور ان میں سے بیشتر جرمنی جانا چاہتے ہیں۔

نامہ نگاروں کے مطابق ہنگری میں حکام نے تارکینِ وطن کو یورپی یونین کے ان قوانین کے تحت رجسٹر کرنے سے انکار کر دیا تھا جن کے مطابق انھیں اس یورپی ملک میں پناہ کی درخواست دینی چاہیے جہاں وہ سب سے پہلے داخل ہوں۔

منگل کو ایک ہزار کے قریب پناہ گزیں کیلیتی کے سٹیشن کے باہر جمع ہوئے اور احتجاج کیا۔ اس موقع پر سٹیشن بند کر دیا گیا تاہم بعد میں پولیس نے صرف ایسے مسافروں کو سٹیشن میں داخلے کی اجازت دی جو کہ تارکینِ وطن نہیں تھے۔

اس سے قبل پیر کو ہنگری کی سرحد پر کئی گھنٹے روکے جانے کے بعد سینکڑوں پناہ گزین ٹرین کے ذریعے آسٹریا کے دارالحکومت ویانا پہنچے تھے۔

ان میں سے بہت سے فوراً جرمنی جانے کے لیے پھر سے ٹرین میں سوار ہو گئے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption آسٹریا کی پولیس کے مطابق منگل کو ویانا کے ریلوے سٹیشن پر ایک ہزار تارکین وطن پہنچے

خیال رہے کہ گذشتہ جمعرات کو ہنگری میں ایک ٹرک سے 71 تارکینِ وطن کی لاشیں پائے جانے کے واقعے کے بعد سے آسٹریا کی حکومت شاہراہوں کی خصوصی نگرانی کر رہی ہے۔

اعداد و شمار کے مطابق صرف گذشتہ مہینے ایک لاکھ 7500 تارکینِ وطن یورپ میں داخل ہوئے ہیں۔

گذشتہ روز آسٹریا میں حکام نے ملک کی مشرقی سرحدوں پر گاڑیوں کی تلاشی کے آپریشن کے دوران پانچ مشتبہ انسانی سمگلروں کو گرفتار کر لیا ہے۔

دوسری جانب آسٹریا میں ہزاروں افراد نے جلوسوں میں شرکت کی اور تارکینِ وطن کو بہتر حقوق دینے کا مطالبہ کیا۔

لیبیا سے یورپ جانے کے لیے کوشاں سینکڑوں افراد بحیرۂ روم میں سفر کے دوران ڈوب کر ہلاک ہوگئے ہیں۔

پیر کو یہ اطلاعات موصول ہوئی تھیں کہ آسٹریا کے حکام نے ویانا جانے والی ایک ٹرین کو روکا تھا اور کہا تھا کہ جس نے بھی ہنگری میں پناہ کے لیے درخواست کر رکھی تھی اسے واپس بھیج دیا جائے گا، تاہم ابھی یہ واضح نہیں کہ آیا ایسا عملی طور پر ہوا بھی یا نہیں۔

آسٹریا کی پولیس کے مطابق منگل کو ویانا کے ریلوے سٹیشن پر ایک ہزار تارکین وطن پہنچے، جنھیں لوگوں نے رضاکارانہ طور پر خوراک اور پانی دیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ epa
Image caption آسٹریا کی پولیس کا کہنا ہے کہ پیر کو ہنگری سے 3650 تارکینِ وطن دارالحکومت ویانا پہنچے ہیں اور ان میں سے بیشتر جرمنی جانا چاہتے ہیں۔

حکام کا کہنا ہے کہ پناہ کی تلاش میں آنے والوں کے پاس یہ فیصلہ کرنے کے لیے دو ہفتے ہوں گے کہ وہ تارکینِ وطن کا درجہ حاصل کرنا چاہتے ہیں یا نہیں۔

بی بی سی کی نامہ نگار بیتھنی بیل کے مطابق یورپ کے مشرقی سرحدوں پر آنے والے پناہ گزینوں کی مرکزی منزل جرمنی ہو گا۔ جرمنی کا اندازہ ہے کہ رواں برس اسے پناہ کے حصول کے لیے تارکینِ وطن کی آٹھ لاکھ درخواستیں موصول ہوں گی۔

جرمن چانسلر انگیلا میرکل نے اتوار کو اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ اب یکجہتی دکھانے کی ضرورت ہے۔

خیال رہے کہ یورپی یونین میں شامل کچھ ممالک نے یورپی یونین کی جانب سے پناہ گزینوں سے نمٹنے کے لیے ایک مشترکہ منصوبے کو اپنانے کے سلسلے میں مزاحمت کی جا رہی ہے۔

اتوار کو برطانوی سیکریٹری داخلہ ٹیریسا مے نے یورپی یونین سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ اپنی سرحدوں پر آمدورفت کے قوانین کو سخت کرے۔

ادھر فرانس نے ہنگری کی جانب سے سربیا سے متصل سرحد پر خاردار باڑ لگانے پر مذمت کی ہے۔

اقوامِ متحدہ کے مطابق شام میں جاری تنازع پناہ گزینوں کی بڑھتی ہوئی تعداد کی بڑی وجہ ہے۔

یونان، اٹلی اور ہنگری وہ ایسے یورپی ملک ہیں جن کو شام، مشرقِ وسطیٰ اور افریقہ سے آنے والے پناہ گزینوں کی کثیر تعداد کا سامنا ہے۔

یورپی یونین کے وزرائے داخلہ کا اجلاس 14 ستمبر کو متوقع ہے۔

اسی بارے میں