پیرس میں آتشزدگی سے آٹھ افراد ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption اطلاعات کے مطابق چار افراد کی حالت نازک بتائی جا رہی ہے

فرانس میں حکام کے مطابق دارالحکومت پیرس میں واقع ایک فلیٹ میں آگ لگنے کے نتیجے میں دو بچوں سمیت آٹھ افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

بدھ کی صبح کو آگ پیرس کے 18ویں ڈسٹرکٹ میں واقع مشہور پہاڑی ’ماؤنٹ مارٹ‘ کے پاس ایک فلیٹ میں بھڑک اٹھی اور اسے بجھانے کے لیے فائر بریگیڈ کے 100 ارکان کی ضرورت پڑی۔

متاثرہ عمارت سے چار افراد کو بچایا گیا ہے لیکن ان کی حالت نازک بتائی جا رہی ہے۔

حکام نے آتشزدگی کے اس واقعے کی تحقیقات شروع کر دی ہیں۔

فرانسیسی خبر رساں ایجنسی اے ایف پی نے ورزیر داخلہ برنارڈ کازنا کے حوالے سے بتایا ہے کہ’سانحے کی وجوہات معلوم کرنے میں ابھی وقت لگے گا۔‘

لیکن ابتدائی تحقیقات سے یہ اشارے ملے ہیں کہ شاید آگ کو جان بوجھ کر لگایا گیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption آگ بجھانے والے عملے کے 100 کارکنوں نے اس آگ کو بچھایا

اے ایف پی کے مطابق صبح دو بج کر 20 منٹ پر آگ بجھانے والے عملے کو جائے وقوع پر بلایا گیا جہاں انھوں نے آگ کو بجھایا لیکن دو گھنٹوں بعد انھیں دوبارہ آگ بجھانے کے لیے بلایا گیا تھا۔

وزارت داخلہ کے ترجمان پیئر ہنری برانڈے نے کہا کہ ’جب ایک ہی رات میں آپ کو ایک ہی جگہ پر دو مرتبہ آگ بجھانے کے لیے بلایا جاتا ہے تو ظاہر ہے کہ یہ کسی کی بدنیتی ہو سکتی ہے۔‘

خیال ہے کہ آگ فلیٹ کی زمینی منزل پر شروع ہوئی اور وہاں سے سیڑھیوں سے اوپر والی منزلوں پر پہنچ گئی۔

اطلاعات کے مطابق کچھ رہائشیوں نے کھڑکیوں کے ذریعے فرار ہونے کی کوشش کی تھی۔

پیرس کی میئر این ہڈالگو نے کہا کہ آگ ایک نجی عمارت میں بھڑک اٹھی جس میں کم آمدنی والے خاندان نہیں رہ سکتے ہیں۔ انھوں نے مزید کہا کہ اس آگ سے 15 دیگر عمارتیں بھی متاثر ہوئی ہیں۔

خیال ہے کہ یہ آگ گزشتہ دہائی میں پیرس میں آگ لگنے کے سب سے مہلک ترین واقعات میں سے ایک ہے۔

اسی بارے میں