امریکی کانگریس میں ایران کے جوہری معاہدے کے حق میں راہ ہموار

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption ریپلکنز یہ دلیل دیتے ہیں کہ اس معاہدے سے ایران جلد بم بنا سکے گا

امریکہ میں حزبِ اختلاف کی جماعت ریپبلکن پارٹی کی جانب سے کانگریس میں ایران کے جوہری پروگرام کے معاہدے کو سبوتاژ کرنے کی کوشش ناکام بنا دی گئی ہے۔ جسے صدر اوباما کی سفارتکاری کی کامیابی قرار دیا جا رہا ہے۔

اس پیش رفت کے بعد صدر اوباما کو ایران کے جوہری پروگرام کے معاہدے کی مخالفت ختم کرنے کے لیے ویٹو کا اختیار استعمال نہیں کرنا پڑے گا۔

جوہری معاہدے کی توثیق: ’کانگریس بھی اتفاق رائے پر توجہ دے‘

ایران کے ساتھ جوہری معاہدہ ’واحد قابل عمل راستہ‘ تھا: جان کیری

ایران کے جوہری معاہدے سے متعلق قرارداد پر حتمی ووٹنگ کروانے کے لیے ریپبلکن پارٹی کو 60 ووٹ درکار تھے جن میں سے دو کم ہوگئے۔

صدر اوباما کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ یہ ووٹنگ قومی سلامتی اور دنیا کی سکیورٹی کے لیے امریکی سفارتکاری کی کامیابی ہے۔

سینٹ میں اقلیتی جماعت کے سربراہ ہیری ریڈ کا کہنا ہے کہ آج ہونے والی پیش رفت بہت واضح، فیصلہ کن اورحتمی ہے اور یہ کہ معاہدے کو سبوتاژ کرنے کی کوششیں وقت کا ضیائع ہیں۔

اپنی پہلی صدارتی مہم کے دوران صدر اوباما نے اس عزم کا اظہار کیا تھا کہ وہ اپنے دوستوں اور دشمنوں کے ساتھ پیشگی شرائط کے بغیر مذاکرات کریں گے۔

کیوبا کے ساتھ تعلقات اور ایران کے ساتھ جوہری معاہدے کو اوباما کی خارجہ پالیسی کا اہم ورثہ قرار دیا جائے گا۔

آئندہ ہفتے صدر اوباما ایران پر عائد امریکی پابندیاں ختم کرنے کی اجازت دیں گے۔

امریکہ میں حزبِ اختلاف کی جماعت ریپبلکن پارٹی جوہری معاہدے کے مخالفت میں یہ دلیل دیتی ہے کہ اس معاہدے سے ایران جلد بم بنانے کے قابل ہو جائے گا۔

سپیکر جان بوہنر نے کہا ہے کہ وہ اس معاہدے کو روکنے، اس میں تاخیر کرنے کے لیے کوششیں کریں گے۔

خیال رہے کہ گذشتہ جمعے کو سعودی عرب نے کہا تھا کہ امریکی صدر براک اوباما کی یقین دہانی سے وہ خوش ہے کہ ایران کے ساتھ حالیہ جوہری معاہدے سے خلیجی ممالک کو خطرہ لاحق نہیں ہوگا۔

اسی بارے میں