ریفیوجی ماریو: پناہ گزینوں کی مشکلات پر ویڈیو

Image caption اس وڈیو میں اکثر مقامات میں پر ریفیوجی ماریو کو ایسی رکاوٹوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے جو اسے موت کر طرف لے جاتی ہیں

ترکی کے شہر استنبول کے ایک رہائشی نے شامی پناہ گزینوں کے یورپ میں داخلے کی حقیقت بیان کرنے کے لیے ننٹینڈو کی مشہور ویڈیو گیم سپر ماریو کو طنزیہ طور پر استعمال کیا ہے۔

اس ’ریفیوجی ماریو‘ یا پناہ گزین ماریو کے کردار کے ذریعے یو ٹیوب پر جاری ہونے والی اس ویڈیو میں ان ہزاروں افراد کے خطرناک سفر کو دکھایا گیا ہے جو یورپ میں پناہ کی تلاش میں آئے ہیں۔

ریفیوجی ماریو کو سمگلر بحیرۂ روم کے راستے ایک خطرناک سفر پر لے جاتے ہیں جہاں آخر کار اسے ہنگری کی سرحد پر تعینات محافظ پکڑنے کے بعد جیل میں ڈال دیتے ہیں۔

اس ویڈیو میں اکثر مقامات میں پر مرکزی کردار کو ایسی رکاوٹوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے جو اسے موت کر طرف لے جاتی ہیں۔

یہ ویڈیو ایک 29 سالہ شامی شخص سامر ال مفتی نے بنائی ہے جو استنبول میں رہتے ہیں۔ یہ ان کا فرضی نام ہے سکیورٹی خدشات کے باعث انھوں نے اپنا اصل نام ظاہر نہیں کیا۔

Image caption آن لائن فار میڈیا پروڈکشن نامی کمپنی اکثر شام کی سیاست پر طنزیہ مواد بناتی رہتی ہے

ایسی وڈیو بنانے کا خیال انھیں آیا کیسے آیا؟ اس بارے میں انھوں نے بتایا کہ ’میرے بہت سے دوست یورپ کی جانب گئے ہیں، ان سے بات کرنے کے بعد مجھ پر یہ واضح ہو گیا کہ ان سب پر کیا گزری ہے اور کیسے ان سب نے اپنی زندگی کو خطرے میں ڈالا۔‘

انھوں نے بی بی سی ٹرینڈنگ کو بتایا کہ ’پانچ ماہ قبل میرا بہت اچھا دوست ازمیر سے یونان جاتے ہوئے سمندر میں ڈوب گیا۔ جس کشتی پر وہ سوار تھا اس کا انجن پھٹ گیا تھا۔ جس کے بعد مجھے یہ ویڈیو بنانے کا خیال آیا۔‘

’اس کے لیے ایک ایسے سادہ اور واضح تصور یا خیال کی ضرورت تھی جسے کسی زبانوں کی ضرورت نہ ہو۔ میں نے سپر ماریو کا انتخاب اس لیے کیا کیونکہ وہ پوری دنیا میں مشہور ہے یہ بلکل موسیقی کی طرح ہے، ایک عالمی زبان۔‘

شام کی سیاست پر طنزیہ مواد بنانے والی آن لائن فار میڈیا پروڈکشن نامی کمپنی کی جانب سے اسے فیس بک اور یوٹیوب پر ڈالنے کے بعد سے اب تک ہزاروں افراد یہ ویڈیو دیکھ چکے ہیں۔

سامر کا کہنا ہے کہ ’اس پر بہت بات ہو رہی ہے جس نے مجھے حیران کر دیا ہے یہ صرف شام کے لوگ ہی نہیں دیکھ رہے بلکہ دنیا بھر کے لوگ اس کے بارے میں بات کر رہے ہیں۔‘

اسی بارے میں