جیریمی کوربن: لیبر کے ’باغی‘ رہنما

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption جیریمی سات بار لندن سے الیکشن جیت چکے ہیں اور گزشہ 32 سالوں سے ممبر پارلیمنٹ ہیں

برطانیہ کی حزبِ اختلاف کی جماعت لیبر پارٹی کے نئے سربراہ اور بائیں بازو کے نظریات کے حامی سیاستدان جیریمی کوربن برطانیہ کے علاقے ولٹشائر میں پیدا ہوئے۔

پیشے کے اعتبار سے جیریمی کے والد انجینیئر اور والدہ استانی تھیں۔

شمالی لندن کے ایک تعلیمی ادارے سے تعلیم یافتہ جیریمی نے اپنی ڈگری مکمل کیے بغیر ہی تعلیم کو خیرآباد کہہ دیا۔

وہ ایک عرصے سے لیبر پارٹی سے وابستہ ہیں اور ایک دہائی تک لندن میں بحثیت کونسلر فرائض سرانجام دے چکے ہیں۔

سیاست کے علاوہ جیریمی نے صرف دو نوکریاں کی ہیں اور ان کی یہ نوکریاں دو مختلف مزدوروں کی نمائندہ تنظیموں کے ساتھ تھیں۔

سنہ 1983 میں پہلی بار لندن سے پارلیمنٹ کے لیے منتخب ہونے والے جیریمی سات بار لندن سے الیکشن جیت چکے ہیں اور گزشہ 32 سالوں سے ممبر پارلیمنٹ ہیں۔

ان کی جیت کی کیا اہمیت ہے؟

80 کی دہائی میں انتخابات میں ناکامی کے بعد لیبر پارٹی نے بہت سی بائیں بازو کی پالیسیوں کو ترک کر دیا تھا لیکن جیریمی نے اس کی مخالفت کی تھی۔

جیریمی کی جیت بھی یورپ کے بعض ممالک جیسے یونان اور سپین میں بائیں بازو کے نظریات رکھنے والے سیاستدانوں کی مقبولیت میں اضافے کی ایک کڑی ہے۔

برطانیہ میں اس وقت دائیں بازو کی کنزرویٹو جماعت برسرِ اقتدار ہے اور اگلے انتخابات سنہ 2020 میں ہوں گے لہذا یہ جاننے کے لیے ابھی کافی وقت ہے کہ آیا جیریمی عام ووٹروں میں بھی اتنے ہی مقبول ہیں جیتنے وہ لیبر پارٹی کے ممبران میں ہیں۔

Image caption جیریمی کے پاس گاڑی نہیں ہے اور وہ سائیکل چلانا پسند کرتے ہیں

فارغ وقت میں کیا کرنا پسند کرتے ہیں؟

فنانشل ٹائمز اخبار کے مطابق اپنی زمین پراگنے والے فروٹ سے جیم بنانا ان کا محبوب مشغلہ ہے۔ جـیریمی برطانوی پارلیمنٹ کے ’آل پارٹی گروپ فار چیز (پنیئر)‘ کے ممبر بھی ہیں۔ اس کے علاوہ کہا جاتا ہے کہ وہ ٹرینیں دیکھنے کے بھی شوقین ہیں۔

سبزی خور جیریمی کے پاس گاڑی نہیں ہے اور وہ سائیکل چلانا پسند کرتے ہیں۔

وہ آرسینل فٹ بال کلب کی حمایت کرتے ہیں۔

جیریمی تین بار شادی کرچکے ہیں اور انھوں نے تیسری شادی رواں سال ہی کی ہے۔ ان کے تین بیٹے ہیں جن میں سے ایک ان کے لیبر پارٹی کی لیڈر شپ کے انتخاب کے لیے مہم چلانے والی ٹیم کا حصہ تھا۔

دنیا کے متعلق ان کے خیالات کیا ہیں؟

وہ عراق جنگ کے شدید مخالف تھے اور انھوں نے اس عزم کا اظہار کیا ہے کہ برطانیہ مزید ’غیرقانونی جنگوں‘ کا حصہ نہیں بنے گا۔

جیریمی جوہری ہتھیاروں کے خاتمے کے حامی ہیں اور وہ برطانیہ کے ٹرائیڈنٹ نامی جوہری میزائیلوں کا خاتمہ چاہتے ہیں۔

وہ نیٹو اتحاد میں اصلاحات چاہتے ہیں اور اس کے علاوہ پورپی یونین کو بھی تنقید کا نشانہ بناتے رہے ہیں تاہم وہ برطانیہ کے یورپی یونین سے نکلنے کے حامی نہیں ہیں۔

ان کو حزب اللہ اور حماس کو پارلیمنٹ میں بلانے پر تنقید کا سامنا بھی کر نا پڑا تھا۔

Image caption لیڈر بننےکے بعد شاہد اب ان کے پاس جیم بنانے کے لیے وقت نہ ہو

کبھی کسی سرکاری عہدے پر نہیں رہے

اگرچہ لیبر پارٹی کئی بار اقتدار میں رہی لیکن جیریمی کو کبھی بھی کسی لیبر لیڈر نے کوئی سرکاری عہدے کی پیشکش نہیں کی۔

درحقیقت جیریمی نے اکثر وقت اپنی پارٹی کے لیڈروں کی مخالفت میں صرف کیا ہے اور سنہ 1997 سے 2010 تک وہ اپنی پارٹی کے سب سے زیادہ باغی ممبر پارلیمنٹ تھے۔ اس عرصے کے دوران انھوں نے 500 بار اپنی پارٹی کی مخالفت میں ووٹ ڈالا۔

اسی بارے میں