شام میں فضائی حملوں پر روس کو نیٹو کی تنبیہ

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption روس کا کہنا ہے کہ وہ شدت پسند تنظیم دولت اسلامیہ کو نشانہ بنا رہا ہے

نیٹو نے روس سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ شام میں صدر بشار الاسد کی حکومت کے مخالفین اور عام شہریوں پر فضائی حملے بند کر دے۔

تنظیم نے ایک بیان میں خبردار کیا ہے کہ روس کے غیر ذمہ دارانہ رویے سے شدید خطرات پیدا ہو سکتے ہیں۔

روس کا کہنا ہے کہ وہ شام میں شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ کو نشانہ بنا رہا ہے لیکن ترکی اور امریکی اتحاد کا کہنا ہے کہ روس کا ہدف شامی حکومت کے مخالفین ہیں۔

شام میں اپنی فضائی کارروائیاں تیز کریں گے: روس

’روسی افواج کی مداخلت سے صورتحال مزید خراب ہو رہی ہے‘

روسی بمباری سے دولتِ اسلامیہ مضبوط ہو رہی ہے، اوباما

ادھر شام میں 40 سے زیادہ حکومت مخالف گروہوں نے روسی حملوں کے خلاف خطے کے ممالک سے روس اور ایران کے خلاف اتحاد قائم کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

ان گروپوں نے روس پر الزام لگایا ہے کہ وہ شام پر قبضہ کر رہا ہے۔

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

مطالبہ کرنے والے گروپوں میں القاعدہ کا حامی النصرہ فرنٹ تو شامل نہیں لیکن طاقتور ملیشیا احرار الشام نے ضرور اس مطالبے کی حمایت کا اعلان کیا ہے۔

نیٹو کے 28 رکن ممالک کی جانب سے جاری کیے گئے بیان میں روس کو ’اس قسم کے غیر ذمہ دارانہ رویے سے لاحق ہونے والے شدید خطرات‘ کے بارے میں تنبیہ کی گئی ہے اور کہا گیا ہے کہ وہ ’فضائی مہم بند کر دے۔‘

تنظیم کا کہنا ہے کہ روس کے اقدامات ’مزید خطرناک سطح پر پہنچ گئے ہیں۔‘

یہ بیان ایک ایسے وقت آیا ہے جب ایک روسی جنگی طیارے نے ترکی کی فضائی حدود کی خلاف ورزی بھی کی ہے۔

روس کا کہنا ہے کہ یہ واقعہ نیوی گیشن کی غلطی کے باعث پیش آیا جبکہ امریکہ کا کہنا ہے کہ ترک فوج کے پاس ایسے کسی طیارے کو مار گرانے کا حق ہے۔

اسی بارے میں