بلغاریہ کے سرحدی محافظوں کی فائرنگ سے افغان تارکِ وطن ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption اقوامِ متحدہ کے مطابق روزانہ تقریباً آٹھ ہزار پناہ گزینوں یورپ آمد میں داخل ہو رہے ہیں

بلغاریہ کے میڈیا کے مطابق ترکی سے متصل ملک کی سرحد پر محافظوں کی فائرنگ سے ایک افغان تارک وطن ہلاک ہو گیا ہے۔

بی این آر ریڈیو سٹشین کے مطابق ہلاک ہونے والا افغان باشندہ ان 48 افراد میں ایک سے تھا جو ترکی کے راستے بلغاریہ میں داخل ہو رہے تھے۔ یہ واقعہ جنوب مشرقی سرحد کے قریب پیش آیا۔

’یورپ میں روزانہ آٹھ ہزار تارکین وطن پہنچ رہے ہیں‘

اس واقعے کے بعد بلغاریہ وزارتِ داخلہ جمعے کو ایک بریفنگ کا انعقاد کر رہی ہے۔

بلغاریہ کے کئی خبر رساں اداروں کا کہنا ہے کہ اس شخص کو سرحدی محافظوں نے گولی ماری اور یہ ہسپتال لے جاتے ہوئے راستے میں دم توڑ گیا۔

ادھر یورپی یونین کے اجلاس میں موجود بلغاریہ کے وزیرِ اعظم بوئکو بوریسوو اس خبر کے ملنے کے بعد اجلاس سے اٹھ گئے۔

اس اجلاس میں یورپی یونین میں داخل ہونے والے تارکینِ وطن کے بحران پر بات چیت کی جا رہی تھی۔

اقوامِ متحدہ کے مطابق روزانہ تقریباً آٹھ ہزار پناہ گزینوں یورپ آمد میں داخل ہو رہے ہیں۔

ان تارکین وطن کو یورپ کے مختلف ممالک میں آباد کرنے کے حوالے سے اگرچہ یورپی یونین کے ملکوں میں اختلافات پائے جاتے ہیں لیکن یورپی وزراء کے ایک اجلاس میں 120,000 تارکینِ وطن یورپ بھر میں آباد کرنے کا معاہدہ طے پا چکا ہے۔

واضح رہے کہ کچھ یورپی ممالک تارکینِ وطن کو مختلف ممالک میں آباد کرنے کے منصوبے کے مخالف ہیں۔ جن میں ہنگری، رومانیہ، جمہوریہ چیک اور سلوواکیہ شامل ہیں۔

اسی بارے میں