اٹلی میں میئر کی بندوق کی خریداری پر مالی مدد کی پیشکش

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption ’خالی جیلوں سے بہتر ہے کہ قبرستان چوروں سے بھر جائیں۔‘

شمالی اٹلی کے شہر بورگیشیا کے میئر نے بندوقیں خریدنے کے خواہشمند شہریوں کو مالی مدد فراہم کرنے کی پیشکش کی ہے۔

دائیں بازوں کی جماعت سے تعلق رکھنے والے میئر جینلوکا بوانانو نے اس نئی سکیم کو ’گن بونس‘ قرار دیا ہے۔

سکیم کے تحت بورگیشیا میں خریداری کرنے والے ہر شہری کے لیے حکومت بندوق کی قیمت کا 30 فیصد حصہ ادا کرے گی۔

گذشتہ ہفتوں میں ایک شخص کے ہاتھوں ایک چور کی ہلاکت کے بعد اٹلی میں بندوق رکھنے کے قوانین پر بھرپور بحث چھڑ گئی ہے۔

لا سٹیمپا اخبار کے مطابق وقعہ کے بعد اس شخص پر قتل کا مقدمہ درج کیا گیا۔

مسٹر بوانانو نے کہا کہ وہ اپنے ملک کے شہریوں کی اپنی حفاظت کرنے کی صلاحیت کو قائم رکھنا چاہتے ہیں اور اس طرح کے مقدمات پر انھیں شدید غصہ ہے۔

انھوں نے کہا کہ ’خالی جیلوس سے بہتر ہے کہ قبرستان چوروں سے بھر جائیں۔‘

اٹلی میں بندوق رکھنے کے قوانین بہت سخت ہیں اور انھیں لینے سے پہلے خریداروں کو مختلف قسم کے لائسنس حاصل کرنے کی ضرورت ہے۔

ہر خریدار کا پولیس ریکارڈ چیک ہوتا ہے اور ان کو میڈیکل ریکارڈ بھی پیش کرنے کی ضرورت ہوتی ہے۔

مسٹر بونانو جو کے یورپی پارلیمان کے ممبر بھی ہیں، ماضی میں سنسنی خیز بیانات دینے کے لیے مشہور ہیں۔

2014 میں غیر قانونی تارکین وطن کی ہجرت کے مسئلے پر پارلیمان سے تقریر کرنے سے پہلے انھوں نے اپنے چہرے پر سیاہی ملی تھی۔

گذشتہ ماہ انھوں نے اینگلا مرکل کی شکل کا ماسک پہن کر یورپی یونیں کے پارلیمانی اجلاس میں تقریر کی تھی۔

اسی بارے میں