نائٹ کلب میں آتشزدگی پر رومانیہ کے وزیر اعظم مستعفی

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

رومانیہ کے وزیرِ اعظم وکٹر پونٹا نے ایک نائٹ کلب میں لگنے والی آگ کے نتیجے میں 32 افراد کی ہلاکت اور اس کے خلاف 20 ہزار افراد کی جانب سے کیے جانے والے مظاہرے کے ایک دن بعد استعفیٰ دے دیا ہے۔

واضح رہے کہ بخارسٹ میں واقع اس کلب میں جمعے کو آتش بازی کے دوران اس وقت آگ لگ گئی تھی جب وقت وہاں ایک بینڈ اپنے فن کا مظاہرہ کر رہا تھا۔

رومانیہ کے نائٹ کلب میں آتشزدگی سے 27 افراد ہلاک

مظاہرین نے حکومت کی بدعنوانی اور ناقص حفاظتی انتظامات پر وزیرِ اعظم پونٹا سے مستعفی ہونے کا مطالبہ کیا تھا۔

واضح رہے کہ رومانیہ کے وزیرِ اعظم کو بدعنوانی الزامات کے تحت پہلے ہی مقدمے کا سامنا ہے۔

وکٹر پونٹا رومانیہ کے پہلے وزیرِ اعظم ہیں جن کے خلاف ستمبر میں فراڈ، ٹیکس چوری اور منی لانڈرنگ کے الزامات کے تحت مقدمہ چلایا گیا۔

انھوں نے ان الزامات کو مسترد کرتے ہوئے استغاثہ پر ’مکمل طور پر غیر پیشہ ور‘ ہونے کا الزام عائد کیا تھا۔

وکٹر پونٹا نے بدھ کو ایک بیان میں کہا کہ وہ اور ان کی حکومت مستعفی ہو رہی ہے۔

انھوں نے رومانیہ کے ٹی وی پر خطاب کرتے ہوئے کہا: ’میں امید کرتا ہوں کہ حکومت کے مستعفی ہونے سے سٹرکوں پر مظاہرہ کرنے والے افراد مطمئن ہو جائیں گے۔‘

رومانیہ میں 30 اکتوبر کو بخارسٹ میں لگنے والی آگ سے ہسپتال میں سو سے زائد افراد داخل ہیں اور ان میں سے چند کی حالت نازک ہے۔ اس بات کی اطلاعات بھی ہیں کہ مرنے والوں کی تعداد میں اضافہ ہو سکتا ہے۔

کولیکٹو نائٹ کلب میں جمعے کو اس وقت آگ لگی جب وہاں 400 افراد ’گڈ بائی ٹو گریٹی‘ نامی ایک بینڈ کی پرفارمنس دیکھنے کے لیے جمع تھے۔

اس حادثے میں محفوظ رہنے والے افراد کے مطابق آگ آتش بازی کی وجہ سے لگی۔

کولیکٹو نائٹ کلب کے مالکان کو کلب میں گنجائش سے زیادہ افراد کو داخل کرنے، کلب میں ہنگامی راستوں کی کمی اور اس طرح کے کانسرٹس کے انعقاد کی اجازت نہ ہونے کے الزامات کے تحت گرفتار کیا جا چکا ہے۔

اسی بارے میں