روسی سکیورٹی سروس کا دروازہ نذرِ آتش

تصویر کے کاپی رائٹ AFP Getty
Image caption پیوتر پاولینسکی نے ’لبیانکا‘ کی عمارت کے دروازے کو آگ لگائی جس کے بعد وہ اس کے سامنے پیٹرول کا ڈبہ پکڑ ے ہوئے دکھائی دیے تھے

روس کی وفاقی سکیورٹی سروس کا کہنا ہے کہ اس نے ماسکو میں ایک روسی فنکار اور سرگرم سیاسی کارکن کو گرفتار کر لیا ہے جس نے ملک کی سلامتی کے ادارے کی عمارت کے دروازے کو آگ لگائی تھی۔

پیوتر پاولینسکی نے ’لبیانکا‘ کی عمارت کے دروازے کو آگ لگائی تھی جس کے بعد وہ اس کے سامنے پیٹرول کا ڈبہ پکڑ ے ہوئے دکھائی دیے تھے۔

روس: پوتن کے لاکھوں حامی سڑکوں پر

پُسی رائٹ: سرمائی اولمپکس کا بائیکاٹ کرنے کی اپیل

اس سے قبل مسٹر پاولینسکی کو سنہ 2013 میں گرفتار کیا گیا تھا جب ماسکو کے لال چوک پر ایک احتجاج کے دوران انھوں نے اپنے فوطوں کو کیلوں کے ذریعے فرش پر ٹھونک دیا تھا۔

لبیانکا کی عمارت روس کی سکیورٹی ایجنسی کا تاریخی گھر ہے۔

یہ عمارت پہلے ملک کی خفیہ پولیس کا مرکزی دفتر ہوا کرتی تھی جس کے بعد اسے روس کی وفاقی سلامتی کی سروس نے استعمال کرنا شروع کر دیا تھا۔

فنکار نے اپنی حرکت کی ویڈیو جاری کرتے ہوئے ایک بیان میں کہا: ’روس کی وفاقی سلامتی کی سروس بلاتعطل دہشت گردی کے طریقہ کار استعمال کر کے 14 کروڑ 60 لاکھ کی آبادی پر حکمرانی کرتی ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption ماضی میں پاولینسکی نے روسی صدر ولادی میر پوتن کے خلاف احتجاج کرنے والے میوزک بینڈ پُسی رائٹ کی گرفتاری پر احتجاجی طور اپنے ہونٹ سی دیے تھے

سرگرم کارکنوں کی گرفتاری کی نگرانی کرنے والی روسی ویب سائٹ ’میڈیازونا ڈاٹ آر یو‘ کے مطابق پاولینسکی کی پوچھ گچھ معمولی غنڈا گردی کے شبے میں کی گئی ہے۔

روسی ذرائع ابلاغ کی اطلاعات کے مطابق پاولینسکی کے مظاہرے کی ویڈیو ریکارڈ کرنے والے دو صحافیوں کو پوچھ گچھ کے لیے لے کر جایا گیا ہے۔

ماضی میں پاولینسکی نے روسی صدر ولادی میر پوتن کے خلاف احتجاج کرنے والے میوزک بینڈ پُسی رائٹ کی گرفتاری پر احتجاج کرتے ہوئے اپنے ہونٹ سی دیے تھے۔

اس کے علاوہ انھوں نے حکومت کے مخالفین کے جبری نفسیاتی علاج پر احتجاج کرتے ہوئے اپنے کان کا ایک حصہ کاٹ دیا تھا۔

ایک دیگر احتجاج کے دوران پاولینسکی اپنے برَہنہ جسم کو خار دار تاروں سے لپیٹ کر روس کی پارلیمنٹ کی عمارت کے باہر لیٹ گئے تھے۔

اسی بارے میں