’قطر مزدوروں کا استحصال روکنے میں ناکام رہا ہے‘

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption ایک اندازے کے مطابق قطر میں اس وقت 18 لاکھ غیر ملکی مزدور موجود ہیں

حقوقِ انسانی کے لیے کام کرنے والی عالمی تنظیم ایمنیٹسی انٹرنیشنل نے کہا ہے کہ قطر تاحال غیر ملکی کارکنوں اور مزدوروں کے استحصال کے خاتمے کے لیے ٹھوس اقدامات نہیں کر سکا ہے۔

قطر کو پانچ برس قبل سنہ 2022 کے فٹبال ورلڈ کپ کی میزبانی کے لیے منتخب کیا گیا تھا اور وہاں اس سلسلے میں جاری تیاریوں کے دوران غیر ملکی کارکنوں کے حالاتِ کار اور رہائش کے بارے میں خدشات ظاہر کیے جاتے رہے ہیں۔

قطری لوگ تنقید سے ناخوش ہیں

قطر مزدوروں کے حالات بہتر بنانے میں تاحال ناکام

ایمنیسٹی کا کہنا ہے کہ مزدوروں کا استحصال جاری رہنا قطر اور فٹبال کی عالمی نگران تنظیم فیفا دونوں کے لیے باعثِ شرم ہے۔

حقوقِ انسانی کی تنظیم نے الزام عائد کیا ہے کہ قطری حکام کارکنوں کو نوکری کی تبدیلی کا حق دینے اور اپنی مرضی سے ملک چھوڑنے سمیت کئی اہم معاملات میں کوئی بھی تبدیلی لانے میں ناکام رہے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption قطری حکام کا کہنا ہے کہ سالِ رواں کے آخر تک مزدوروں کے بارے میں قوانین میں اہم تبدیلیاں ہوں گی

قطر مزدوروں کے استحصال کے الزامات سے انکار کرتا رہا ہے اور اس کا موقف ہے کہ اس نے مزدوروں کے حوالے سے کئی اصلاحات کی ہیں۔

قطر نے گذشتہ برس ’کفالہ‘ نامی اس قانون کو تبدیل کرنے کا وعدہ کیا تھا جس کے تحت غیر ملکی مزدور ایک ہی آجر کے ساتھ بندھے رہنے پر مجبور ہیں اور انھیں ملک سے واپس جانے کے لیے بھی اس کمپنی کی اجازت درکار ہوتی ہے جو انھیں قطر لائی تھی۔

ایک اندازے کے مطابق قطر میں 18 لاکھ غیر ملکی مزدور کام کرتے ہیں جن میں سے بیشتر ورلڈ کپ کی تیاریوں کے حوالے سے تعمیراتی سرگرمیوں کا حصہ ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption قطر فٹبال ورلڈ کپ کے لیے کی جانے والی تعمیرات پر دو سو ارب ڈالر سے زیادہ رقم خرچ کر رہا ہے

ایک اندازے کے مطابق قطر فٹبال ورلڈ کپ کے لیے کی جانے والی تعمیرات پر دو سو ارب ڈالر سے زیادہ رقم خرچ کر رہا ہے اور اس کا کہنا ہے کہ ورلڈ کپ کی وجہ سے ریاست بھر میں جاری تعمیراتی منصوبوں میں تیزی آ گئی ہے۔

خیال رہے کہ یہ رواں برس کے دوران دوسرا موقع ہے کہ ایمنیسٹی انٹرنیشنل کی جانب سے قطر میں کام کرنے والے غیر ملکی مزدوروں کے حالات کے بارے میں خدشات ظاہر کیے گئے ہیں۔

اس سے قبل مئی 2015 میں ایمینسٹی نے اپنی ایک رپورٹ میں کہا تھا کہ ایسے مزدوروں کے حالات میں نہ ہونے کے برابر بہتری ہوئی ہے اور قطر ان کے حقوق کا خیال رکھنے کا وعدہ پورا کرنے میں ناکام رہا ہے۔

اسی بارے میں