یونیسکو کی جانب سے 20 عالمی روایات کی شناخت

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

اقوام متحدہ کے ثقافتی ادارے یونیسکو نے حال ہی میں دنیا کے مختلف حصوں میں رائج 20 روایات شناخت کی ہیں۔

ان روایات میں شمالی کوریا میں کمچی اچار بنانے اور عرب علاقوں میں کافی پیش کرنے کی روایات شامل ہیں۔

اس فہرست میں آسٹریا کے گھڑسواری کے قدیم فن، پیرو اور رومانیہ کے لوک رقص اور نمیبیا میں پھلوں کے میلے کی روایات کو بھی شامل کیا گیا ہے۔

یونیسکو نے بدھ کو اپنے ثقافتی ورثوں کی فہرست جاری کی ہے جس میں دنیا بھر سے 20 نئی روایتوں کو شامل کیا گیا ہے۔

بین الاقوامی وفود اس سلسلے میں نمیبیا کے شہر ونڈہوک میں ملاقات کر رہے ہیں۔

یونیسکو نے شمالی کوریا میں بند گوبھی سے تیار کیے جانے والے کمچی اچار کی روایت کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ روایت وہاں معاشرتی ہم آہنگی میں کردار ادا کرتی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

ادارے نے کہا ہے کہ متحدہ عرب امارات، سعودی عرب، عمان اور قطر میں کافی پیش کرنے کی روایت مہمان نوازی کی رسم کا اظہار ہے۔

ویانا کے سپینش رائڈنگ سکول میں کلاسیکی گھڑ سواری کی روایت کو سکول میں موجود مختلف قومیتوں کے لیے ’ایک مضبوط مشترکہ شناخت‘ کی ضمانت کہا گیا ہے، جبکہ یونان کے جزیرے ٹینوس میں سنگ مرمر تراشی کے فن کو جزیرے کی ثقافتی شناخت کے طور پر تسلیم کیا گیا ہے۔

ارجنٹائن کے دارالحکومت بیونس آئرس میں نقش و نگار سے مزین پینٹنگز کی تکنیک ’فلیٹ پورٹینو‘ بھی اس فہرست میں شامل ہے۔ یہ تکنیک اب پورے ملک میں جانی جاتی ہے۔

نمیبیا کے پھلوں کے میلے اوشی توتھی شومان گونگو کو بھی اس فہرست میں شامل کیا گیا ہے جس میں ملک کے مختلف طبقات مارولا پھل سے تیار کردہ مشروبات پینے کے لیے جمع ہوتے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

اس فہرست میں موجود دیگر روایتوں میں ترکمانستان کے علاقے گوروگلی کی رزمیہ آرٹ کی روایت بھی شامل ہے جس میں گوروگلی کے کسی اہم شخص کی کامیابیوں کو زبانی بیان کیا جاتاہے۔

اس کے علاوہ کمبوڈیا، فلپائن اور ویت نام میں چاولوں کی بوائی کے دوران رسہ کشی کے کھیل کی رسومات ادا کرنے کی روایات کو بھی تسلیم کیا گیا ہے۔