ورلڈ ایئر گیمز کے نظارے

دبئی میں جاری ورلڈ ایئرگیمز میں 55 ممالک کے 850 حریف 23 مختلف مقابلوں میں حصہ لے رہے ہیں، جن میں ماڈل ایئر کرافٹ ریسنگ سے سپیڈ سکائی ڈائیونگ شامل ہیں۔

Image caption متحدہ عرب امارات کی قومی ہوائی کرتب دکھانے والی الفرسان ٹیم ڈبل ہیلکس سموک کے ساتھ اپنی کارکردگی کا مظاہرہ کر رہی ہے۔
Image caption گرم ہوا کے ایک غبارے کو دبئی کے اوپر دیکھا جا سکتا ہے جو اڑان کی مشق کا حصہ ہے۔
Image caption بریٹلنگ ونگ واکرز، میری کلربی اور سارہ ٹینر کو برج العرب ہوٹل دبئی کے اوپر اپنے فن کا مظاہرہ کرتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے۔
Image caption فرانس کے پیرا گلائیڈر تیو دے بلک سکائی ڈائیو دبئی ڈراپ زون کے اوپر کرتب دکھا رہے ہیں۔
Image caption سکائی ڈائیورز، سکائی ڈائیو دبئی ڈیزرٹ ڈراپ زون کے اوپر ٹو وے فارمیشن کی مشق کر رہے ہیں۔ تیسرا سکائی ڈائیور ایک کیمرا مین ہے جو دونوں سکائی ڈائیورز کی مشق کی فلم بندی کر رہا ہے۔
Image caption جہاز کا ایک پائلٹ موسیقی کے ساتھ فری سٹائل کرتب دکھانے کے مقابلے میں حصہ لے رہا ہے۔
Image caption پیرا گلائیڈر پال ہیمر روگنی اپنے انفرادی کرتب کا مظاہرہ کرنے کے لیے سکائی ڈائیو دبئی پام ڈراپ زون کے اوپر سے کود رہے ہیں۔
Image caption زولٹن ویرز اور ان کی ٹیم سکائی لائن آف دبئی کے سامنے اپنے فن کا مظاہرہ کر رہی ہے۔
Image caption گرم ہوا کے غباروں کو سورج غروب ہونے کے بعد لانچ کیا گیا۔
Image caption روس سے تعلق رکھنے والے یوری گارماچوف فری سٹائل راؤنڈ میں کنوپی پائلٹنگ میں اپنے فن کا مظاہرہ کر رہے ہیں۔
Image caption ایلیئٹ نوچیز پام جمیرہ کے اوپر ورلڈ ایئر گیمز کے لیے بنائے گئے سٹیڈیم کے اوپر سے گزر رہے ہیں۔ اس سٹیڈیم میں ورلڈ ایئر گیمز کی افتتاحی تقریب منعقد ہو گی۔
Image caption ایک پیرا گلائیڈر دبئی کے مشہور لوگو آئی لینڈ کے اوپر مشق کر رہا ہے۔
Image caption ٹِم الونگی اپنے انفرادی کرتب شروع کرنے سے پہلے ہیلی کاپٹر سے کود رہے ہیں۔