فاٹا میں پہلا یوتھ فیسٹیول، راحیل شریف کا افتتاح

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption راحیل شریف نے افتتاح کیا لیکن میڈیا کو کوریج کی اجازت نہیں تھی

پاکستان کے قبائلی علاقوں سے تعلق رکھنے والے نوجوانوں میں مثبت اور صحت مندانہ سرگرمیوں کے فروغ کے لیے پہلے گورنر یوتھ فسیٹول کا آغاز ہو گیا ہے جس کا باقاعدہ افتتاح بری فوج کے سربراہ جنرل راحیل شریف نے کیا۔

پشاور، مہمند اور خیبر ایجنسی میں بیک وقت منعقد ہونے والا کھیلوں کا یہ بڑا میلہ آٹھ دن تک جاری رہے گا جس میں فاٹا کے 1700 سے زائد نوجوان مرد و خواتین کھلاڑی شرکت کر رہے ہیں۔

یوتھ فیسٹول کی افتتاحی تقریب بدھ کو قیوم سٹیڈیم پشاور میں منعقد ہوئی جہاں مہمان خصوصی کی حثیت سے شریک پاک فوج کے سربراہ جنرل راحیل شریف نے باضابط طورپر کھیلوں کے اس بڑے میلے کا افتتاح کیا۔

گورنر ہاؤس پشاور سے جاری ہونے والے ایک مختصر بیان کے مطابق یہ سات روز فیسٹول فاٹا سیکرٹریٹ کے ڈائریکٹر سپورٹس ، کلچر اور یوتھ افئیرز کے زیرِانتظام منعقد کیا جا رہا ہے جس میں فاٹا سے تعلق رکھنے والے 1785 کھلاڑی شرکت کرینگے۔ فیسٹول میں قبائلی علاقوں کی خواتین کھلاڑی بھی بڑی تعداد میں شرکت کررہی ہیں۔

وفاق کے زیر انتظام قبائلی علاقوں میں امن کی بحالی کے ساتھ ساتھ فاٹا میں کھیل و ثقافت اور ادب کے فروغ اور دیگر صحت مندانہ سرگرمیوں میں نوجوانوں کی شرکت یقینی بنانے کے مقصد کے تحت منعقدہ اس کھیلوں کے میلے میں ولی بال، باسکٹ بال، فٹ بال، بیس بال، رسہ کشی، باکسنگ، ویٹ لفٹنگ ، اتھلیٹکس، بیڈمنٹن اور نشانہ بازی سمیت تیس مختلف کھیلوں کے مقابلے منعقد ہونگے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ اس فیسٹول میں معذور کھلاڑیوں کےلیے بھی خصوصی مقابلے منعقد کرائے جارہے ہیں۔ کھیلوں کے مقابلوں کے علاوہ اس فیسٹول میں آرٹ کی نمائش، فاٹا فوڈ فیسٹول ، نوادارات کی نمائش، بزنس ایکسپو، اور گرینڈ مشاعرہ بھی منعقد ہوگا۔

فیسٹول کے منتظمین کا کہنا ہے کہ فاٹا یوتھ میلہ قبائلی علاقوں کی تاریخ میں نوجوانوں کےلیے یہ سب سے بڑا ایونٹ ہے جس میں فاٹا کے تمام علاقوں کو نمائندگی دی گئی ہے۔

اس فیسٹول کی خاص ایونٹس میں ایک ہزار سے زائد قبائلی نوجوانوں کی جانب سے روایتی اتنڑ رقص پیش کرنا، سینکڑوں قبائلیوں کی جانب سے مل کر قومی پرچم بنانا اور دیگر کرتب اور مظاہرے شامل ہیں۔

افتتاحی تقریب میں آرمی چیف کے علاوہ گورنر خیبر پختونخوا سردار مہتاب احمد خان، کور کمانڈر پشاور، فاٹا کے اراکین پارلمینٹ اور دیگر سول و فوجی حکام نے شرکت کی۔ اس موقع پر سکیورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے تھے جبکہ ذرائع ابلاغ کے نمائندوں کو بھی کوریج کی اجازت نہیں دی گئی۔

اسی بارے میں