امریکہ میں نسلی تعصب کے خلاف مظاہرہ، ہوائی اڈے، شاپنگ مال متاثر

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption فرگوسن، مسوری، نیو یارک، اور دیگر شہروں میں پولیس کے ہاتھوں سیاہ فام باشندوں کی ہلاکتوں کے نسلی تعصب کے خلاف آواز اُٹھائی جا رہی ہے

امریکی ریاستوں منیسوٹا اور کیلیفورنیا میں بلیک لائیوز میٹرز (سیاہ فام زندگیاں بھی قیمتی ہیں) نامی گروہ کی جانب سے خریدوفروخت کے لیے سال کے سب سے اہم دن پر مظاہرے کیے گئے ہیں۔

منیسوٹا میں مظاہرین نے عارضی طور پر بین الاقوامی ہوائی اڈہ بند کروایا جبکہ معروف شاپنگ مال، مال آف امریکہ میں بھی کرسمس کی خریداری میں رکاوٹیں ڈالیں ہیں۔

پولیس کا کہنا ہے کہ دونوں جگہوں سےمجموعی طور پر 15 افراد کو گرفتار کیا گیا ہے جن میں زیادہ تر افراد پر غیر قانونی داخلے اور امن وامان کی صورتحال میں خلل ڈالنے کا الزام ہے۔

مظاہرین میں پولیس کی فائرنگ سے سیاہ فام نوجوان کی ہلاکت پر غم و غصہ پایا جاتا ہے۔

جمار کلارک کو گذشتہ ماہ پولیس نے اس وقت گولی مار دی تھی جب وہ حملہ کرنے کی شکایت پر جائے وقوعہ پہ پہنچے تھے۔ یہ امریکہ میں حالیہ دنوں میں اس نوعیت کے پیش آنے والے کئی واقعات میں سے ایک واقعہ ہے۔

شمالی امریکہ کے سب سے بڑے شاپنگ مال میں کیے جانے والے مظاہرے میں سینکڑوں افراد شریک تھے۔ مقامی جج کی اس تنبیہ کے بعد کہ شاپنگ سینٹر کے مالکان مظاہروں کو روکنے کے قانونی طور پر مجاز ہوں گے ’بلیک لائیوز میٹر‘ گروپ نے وہاں اکٹھا ہونے اور عدالتی احکامات کی حکم عدولی کرنے کا اعلان کیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption مظاہروں کے دوران سکیورٹی سخت تھی اور پولیس کی بھاری نفری موجود تھی۔

اس موقع پر پولیس اور سکیورٹی اہلکاروں کو وہاں فوری طور پر تعینعات کردیا گیا تھا۔ ایک موقع پر پولیس کی جانب سے صورت حال پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا گیا کہ یہ ’بہت زیادہ خطرناک ہے۔‘

مقامی اخبار سان فرانسسکو کرونیکل نے ایک الگ رپورٹ میں بتایا ہے کہ بدھ کے روز کیلی فورنیا شہر کے بین الاقوامی ہوائی اڈے کے نزدیک اہم شاہراہ پر جنوب کی جانب جانے والے ٹریفک کو روکنے والے آٹھ مظاہرین کو گرفتار کرلیا گیا ہے۔

فرگوسن، مسوری، نیو یارک، اور دیگر شہروں میں پولیس کے ہاتھوں سیاہ فام باشندوں کی ہلاکتوں کے خلاف کیے جانے والے مظاہروں کی صورت میں حال ہی میں وجود میں آنے والا بلیک لائیوز میٹرز بہت منظم گروہ نہیں ہے۔

اسی بارے میں