الشباب کی پراپیگنڈا ویڈیو میں ڈونلڈ ٹرمپ

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption 51 منٹ کے دونیے پر مشتمل اس ویڈیو میں ڈونلڈ ٹرمپ کو دس منٹ کے لیے دکھایا گیا

صومالیہ کے شدت پسند گروہ الشباب نے ایک پراپیگنڈا ویڈیو ریلیز کی ہے جس میں امریکی صدارتی امیدوار کی دوڑ میں شامل ڈونلڈ ٹرمپ کو بھی شامل کیا گیا ہے۔

ویڈیو میں ڈونلڈ ٹرمپ کے اس بیان کی فوٹیج شامل کی گئی جس میں انھوں نے مسلمانوں کے امریکہ داخلے پر پابندی عائد کرنے کا مطالبہ کیا تھا۔

خیال رہے کہ الشباب کے القاعدہ کے ساتھ بھی روابط ہیں۔

ڈونلڈ ٹرمپ کے مسلم مخالف بیان پر شدید ردِ عمل

’الشباب اب کینیا میں جنگجو بھرتی کر رہی ہے‘

اس ویڈیو میں افریقی نسل کے امریکیوں سے مطالبہ کیا گیا ہے وہ اسلام قبول کرلیں اور ’مقدس جنگ‘ کا حصہ بنیں۔ ویڈیو میں کہا گیا ہے کہ امریکہ میں نسل پرستی، پولیس کے مظالم اور مسلمان مخالف جذبات غالب ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption حالیہ چند سالوں میں کئی صومالی نژاد امریکی الشباب میں شمولیت کے لیے صومالیہ گئے ہیں

ڈونلنڈ ٹرمپ کی جانب سے اس ویڈیو کے بارے میں کوئی ردعمل سامنے نہیں آیا۔

خیال رہے کہ حالیہ چند سالوں میں کئی صومالی نژاد امریکی الشباب میں شمولیت کے لیے صومالیہ گئے ہیں۔

51 منٹ کے دوانیے پر مشتمل اس ویڈیو میں ڈونلڈ ٹرمپ کو دس منٹ کے لیے دکھایا گیا۔

ڈونلڈ ٹرمپ کا دسمبر میں کہنا تھا کہ مسلمانوں کے امریکہ میں داخلے پر ’مکمل‘ پابندی عائد کر دینی چاہیے ۔ ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا تھا کہ سرحدوں کو اس وقت تک مکمل طور پر بند کر دینا چاہیے جب تک ’ہمارے ملک کے نمائندگان اس بات کا تعین نہیں کر لیتے کہ کیا ہو رہا ہے۔‘

ان کے اس بیان کی امریکہ میں شدید مذمت کی گئی تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption الشباب کینیا اور ایتھوپیا میں بھی حملے کر چکی ہے

حال ہی میں امریکہ کی سابق سیکریٹری خارجہ اور صدارتی امیدوار کی دوڑ میں شامل ہیلری کلنٹن کا کہنا تھا کہ ڈونلڈ ٹرمپ شدت پسند تنظیم دولت اسلامیہ میں ’بھرتیاں کروانے والے‘ بنتے جا رہے ہیں۔

الشباب کی ویڈیو میں ڈونلڈ ٹرمپ کو شدت پسند رہنما انور العولاقی کے دو کلپس کے درمیان دکھایا گیا ہے۔ انور العولاقی سنہ 2011 میں یمن میں ہونے والے ایک ڈرون حملے میں ہلاک ہوگئے تھے۔

انٹیلی جنس ادارے سائٹ کی رپورٹ کے مطابق اس ویڈیو کو شدت پسند تنظیم الخطیب میڈیا فاؤنڈیشن کی جانب سے جمعے کو ٹوئٹر پر جاری کیا گیا تھا۔

واضح رہے کہ الشباب صومالیہ میں مغرب نواز حکومت کا تختہ الٹ کر شرعیت کا نفاذ کرنا چاہتی ہے۔

الشباب کینیا اور ایتھوپیا میں بھی حملے کر چکی ہے۔

اسی بارے میں