’اندرونی معاملات میں مداخلت نہ کرنے پر تناؤ کم ہو سکتا ہے‘

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption سلامتی کونسل نے ایران پر زور دیا ہے کہ وہ اپنے ملک میں موجود غیر ملکی سفارت خانوں کی حفاظت کو یقینی بنائیں

اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے ایران کے دارالحکومت تہران میں سعودی عرب کے سفارت خانے پر حملے کی سخت مذمت کی ہے اور ایران پر زور دیا ہے کہ وہ سفارتی خانوں کی سکیورٹی کو یقینی بنائے۔

سوموار کی شب سلامتی کونسل کی جانب سے جاری کیے جانے والے بیان میں کہا گیا ہے کہ سلامتی کونسل کو سعودی سفارت خانے پر ہونے والے حملے پر شدید تشویش ہے۔

ایران و سعودی عرب ’خطرناک ترین موڑ‘ پر

شیغ نمر النمر کون تھے؟

سعودی عرب نے ایران سے سفارتی تعلقات ختم کردیے

تہران میں سعودی سفارتخانے پر مظاہرین کا حملہ

دوسری جانب وائٹ ہاؤس کے ترجمان جوش ارنیسٹ نے سعودی عرب اور ایران پر زور دیا ہے کہ ان کے تنازعے سے شام کی جنگ کو ختم کرنے کے مذاکرات متاثر نہیں ہونے چاہیں۔

انھوں نے کہا: ’مجھے امید ہے کہ وہ مذاکرات میں شامل ہوں گے۔ شام کے حالات کے سیاسی حل کے لیے آگے بڑھنا واضح طور پر دونوں ممالک کے مفاد میں ہے۔‘

یاد رہے کے گذشتہ ہفتے سعودی عرب میں شیعہ مذہبی رہنما کو سزائے موت دیے جانے کے بعد تہران میں مظاہرین نے سعودی عرب کے سفارت خانے کا محاصرہ کر کے عمارت کے کچھ حصوں کو آگ لگا دی تھی۔

اس واقعے کے بعد دونوں ملکوں کے تعلقات کیشدہ ہو گئے ہیں اور سعودی عرب نے ایران سے سفارتی تعلقات ختم کرتے ہوئے اپنے سفیروں کو واپس بلا لیا ہے۔

اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی جانب سے جاری ہونے والے بیان میں سعودی شیعہ رہنما آیت اللہ شیخ نمر النمر کی سزائے موت کا ذکر نہیں کیا گیا۔

سلامتی کونسل نے ایران پر زور دیا ہے کہ وہ اپنے ملک میں موجود غیر ملکی سفارت خانوں کی حفاظت کو یقینی بنائیں۔

ادھر اقوام متحدہ میں سعودی عرب کے سفیر کا کہنا ہے کہ ایران سعودی عرب کے اندرونی معاملات میں مداخلت نہ کرے۔

اقوامِ متحدہ میں سعودی سفیر عبداللہ المعلومی نے کہا کہ اگر ایران دوسرے کے اندرونی معاملات میں مداخلت نہ کرے تو تعلقات بہتر ہو سکتے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ ’ہماری ایران کے ساتھ پیدائشی دشمنی نہیں ہے۔ یہ صرف ایرانی حکومت کے رویے کی وجہ سے ہے جو دوسرے ممالک بطور خاص عرب ممالک کے اندرونی معاملات میں مداخلت کرتے ہیں۔ اور ہمارے معاملات میں بھی جس کے وجہ سے ہم نے یہ اقدام کیا۔‘

دوسری جانب ایران کے دفتر خارجہ کا کہنا ہے کہ تہران میں سعودی عرب کے سفارتخانے پر حملے کو جواز بنا کر ریاض کشیدگی پیدا کر رہا ہے۔

اسی بارے میں