کولون میں سال نو پر حملے، پولیس سربراہ مستعفی

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption جرمن حکام کا کہنا ہے کہ انھوں نے سالِ نو کی شام 18 سال کے 31 مبینہ پناہ گزینوبں کی شناخت کی ہے جن کا تعلق نئے سال کی آمد کے موقع پر کولون میں ہونے والے جرائم سے تھے

جرمنی کے شہر کولون میں سالِ نو کے موقع پر خواتین پر ہونے والے حملوں اور اس کے ردِعمل میں مظاہروں کے بعد عوامی اعتماد بحال کرنے کے لیے پولیس کے سربراہ اپنا عہدہ چھوڑ رہے ہیں۔

جرمن میڈیا رپورٹس کے مطابق نارتھ رہائن ویسٹفالیا کے وزیرِ داخلہ نے جمعہ کو اعلان کیا کہ ولف گینگ ایلبرس اپنے عہدے سے قبل ازوقت ریٹائرمنٹ لے رہے ہیں۔

خیال رہے کہ سالِ نو کی شام منعقدہ تقریبات کے موقع پر خواتین پر جنسی حملوں کی صورتحال سے نمٹنے کے لیے پولیس کے کردار پر کڑی تنقید کی جا رہی ہے۔

اس شام کولون کے مرکزی ریلوے سٹیشن کے باہر ہونے والے تشدد سے ہجرت کے معاملے پر بحث کو بھی ہوا دی تھی۔

یہ سامنے آیا کہ ان حملوں کے پیچھے بظاہر عرب اور شمالی افریقہ کے خطے سے تعلق رکھنے والے نوجوانوں کے گروہ ملوث تھے۔

جرمن حکام کا کہنا ہے کہ انھوں نے سالِ نو کی شام 18 سال کے 31 مبینہ پناہ گزینوں کی شناخت کی ہے جن کا تعلق نئے سال کی آمد کے موقع پر کولون میں ہونے والے جرائم سے تھے۔

جرمن میڈیا کے مطابق نئے سال کی آمد کے موقع پر جنسی حملوں میں ملوث 16 اور 23 سال کے دو نوجوانوں کو گرفتار کیا گیا ہے جو بظاہر شمالی افریقہ کے لگتے ہیں۔

دو افراد کے موبائل میں بنائی جانے والی ویڈیو میں ریلوے سٹیشن کے باہر کشیدگی اور خواتین پر جنسی حملوں کو دیکھا جا سکتا ہے۔

شہر کی پولیس کا کہنا ہے کہ اس وقت وہ جنسی حملوں کے حوالے سے کل 21 افراد سے تحقیقات کر رہی ہے تاہم ابھی یہ معلوم نہیں کہ ان میں سے پناہ گزین کتنے ہیں۔

جرمن چانسلر انگیلا میرکل نے اِن ’قابلِ نفرت حملوں‘ پر شدید غم وغصے کا اظہار کیا اور کہا کہ واقعے کے ذمہ داروں کی تلاش کے لیے ہر ممکن کوشش کی جائے۔

ان کا کہنا تھا کہ جو جرمن قانون پر عمل کرنے کے لیے تیار نہیں انھیں واضح اشارہ دینا ہوگا۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption جرمن چانسلر نے ان حملوں کے بعد کہا تھا کہ جو جرمن قانون پر عمل کرنے کے لیے تیار نہیں انھیں واضح اشارہ دینا ہوگا

ایک الگ کیس میں پولیس نے چار شامیوں کو گرفتار کیا ہے جن کی عمریں 14 سے 21 سال کے درمیان ہیں۔ اور ان پر بھی الزام ہے کہ انھوں نے جنوبی جرمنی کے گاؤں میں مبینہ طور پر دو نوجوان لڑکیوں کے ساتھ گینگ ریپ کیا تھا۔

حکام کا کہنا ہے کہ مہاجرین کے خلاف موجود گروہ حملہ آوروں کو استعمال کر رہے ہیں تاکہ نفرت کو بڑھایا جائے۔

یورپ کے دیگر کئی ممالک میں بھی پولیس کو شکایات موصول ہوئی ہیں۔

فن لینڈ میں پولیس نے کہا ہے کہ نئے سال کی آمد پر انھیں بڑے پیمانے پر جنسی طور پر ہراساں کیے جانے کے واقعات کی روپرٹس موصول ہوئی ہیں۔ پولیس کے مطابق یہ ایک مکمل طور پر نیا طریقہ کار ہے۔

سویڈن میں پولیس نے دو نوجوانوں کو 15 خواتین پر جنسی حملے کیے جانے کے الزام میں گرفتار کیا ہے۔

ادھر آسٹریا کے وزیرِ داخلہ کا کہنا ہے کہ پولیس اس صورتحال کو بالکل برداشت نہ کرے۔

سماجی رابطوں کی ویب سائٹس پر عرب باشندوں کی جانب سے (اس خبر پر کہ مشتبہ حملہ آوروں کا تعلق شمالی افریقہ اور عرب ممالک سے ہے) شدید شرمندگی کا اظہار کیا جا رہا ہے۔

ڈی ڈبلیو سے وابستہ عرب صحافی نہلا ایل ہنوے کا کہنا ہے کہ ’ہمارے خطے کی بدصورتی جرمنی پہنچ رہی ہے۔‘

اسی بارے میں