الشباب نے صومالیہ میں فوجی اڈے پر قبضہ کر لیا

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption صومالیہ میں اقوام متحدہ کی حمایتی حکومت کی الشباب کے خلاف لڑائی میں مدد دینے کے لیے 22 ہزار افریقی یونین فورسز میں چار ہزار فوجیوں کا تعلق کینیا سے ہے

صومالیہ کی شدت پسند تنظیم الشباب نے جنوبی قصبے الادی کے باہر افریقی یونین کے فوجی مرکز پر قبضہ کر لیا ہے۔

شدت پسند تنظیم کا کہنا ہے کہ اس نے افریقی یونین کے فوجی کیمپ پر ’مکمل کنٹرول‘ حاصل کر کے 60 سے زائد کینیائی فوجیوں کو ہلاک کر دیا ہے۔

مقامی شہریوں نے بی بی سی کو بتایا کہ الشباب نے فوجی کیمپ پر اپنا جھنڈا لہرا دیا ہے اور قصبے میں ہلاک کیے جانے والے فوجیوں کی لاشوں کو گھمایا ہے۔

تاہم کینیا کی فوج کے ترجمان کا کہنا ہے کہ شدت پسندوں نے ایک قریبی صومالی اڈے پر حملہ کیا تھا جس کے جواب میں کینیا کے فوجیوں نے کارروائی کی۔

ایک بیان میں کینیا کی فوج کے ترجمان کرنل ڈیوڈ اوبونیو نے کہا کہ دونوں جانب ہونے والی ہلاکتوں کی تعداد اس وقت معلوم نہیں ہو سکی۔

صومالیہ میں اقوام متحدہ کی حمایتی حکومت کی الشباب کے خلاف لڑائی میں مدد کرنے کے لیے 22 ہزار افریقی یونین فورسز میں چار ہزار فوجیوں کا تعلق کینیا سے ہے۔

الادی کے ایک رہائشی نے بی بی سی کو فون پر بتایا کہ انھوں نے مقامی وقت کے مطابق ساڑھے پانچ منٹ پر دھماکے کی آواز سنی جس کے بعد شدید فائرنگ ہوئی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption الشباب کے مطابق ان کے جنگجوؤں نے کیمپ کے اندر موجود 31 میں سے 28 فوجی گاڑیاں اور اسلحہ قبضے میں لے لیا ہے

’ہم نے اس کے بعد الشباب کے جنگجوؤں کو دیکھا جب کہ کینیا کے فوجی کیمپ چھوڑ کر جا رہے تھے۔‘

انھوں نے مزید بتایا کہ ’اس وقت کیمپ الشباب کے قبضے میں ہے اور ہم فوجی گاڑیوں کو جلتا ہوا اور ہر طرف فوجیوں کی بکھری لاشوں کو دیکھ رہے ہیں۔ اس واقعے میں کوئی عام شہری زخمی یا ہلاک نہیں ہوا ہے لیکن زیادہ تر لوگ قصبہ چھوڑ کر چلے گئے ہیں۔‘

الشباب کے ایک اہلکار نے بی بی سی کو بتایا ہے کہ انھوں نے صبح کی نماز کے بعد حملہ کیا اور عمارت میں داخل ہونے سے قبل کار بم کا دھماکہ کیا۔

انھوں نے مزید بتایا کہ ’ہم نے ایک گھنٹے تک شدید لڑائی کے بعد بیس کیمپ پر کنٹرول حاصل کر لیا ہے۔‘

’ہم نے بیس کیمپ میں کینیا کے فوجیوں کی 63 لاشیں گنی ہیں، جبکہ باقی فوجی یہاں سے فرار ہو گئے ہیں جن کا تعاقب کیا جا رہا ہے۔‘

ان کے مطابق جنگجوؤں نے کیمپ کے اندر موجود 31 میں سے 28 فوجی گاڑیاں اور اسلحہ قبضے میں لے لیا ہے۔

اسی بارے میں