’شام میں قیدیوں کا قتلِ عام کیا جا رہا ہے‘

تصویر کے کاپی رائٹ D
Image caption رپورٹ کے مطابق ہزاروں قیدی اس عرصے میں فریقین کی حراست میں مارے گئے

اقوامِ متحدہ کے انسانی حقوق کے تفتیش کاروں کا کہنا ہے کہ شامی حکومت نے ہزاروں قیدیوں کے قتل ِعام کی ریاستی پالیسی اپنا رکھی ہے۔

اقوامِ متحدہ کی انسانی حقوق کی کونسل کو پیش کی گئی ایک رپورٹ میں انھوں نے صدر بشار الاسد پر الزام عائد کیا کہ ان کی حکومت انسانیت کے خلاف جرائم کا ارتکاب کیا ہے۔

’شام اور روس سیاسی نہیں بلکہ عسکری حل چاہتے ہیں‘

حلب میں شدید لڑائی، ہزاروں پناہ گزینوں کی نقل مکانی

اس تحقیق کے مطابق حکومت کی وفادار فورسز اور باغیوں دونوں کی جانب سے جنگی جرائم کیے گئے ہیں۔

رپورٹ کے مطابق بیشتر قیدیوں پر تشدد کیا گیا، کئی کو اتنا مارا گیا کہ ان کی موت ہو گئی اور کئی خوراک، پانی اور طبی سہولیات نہ ہونے کے باعث مر گئے۔

یہ رپورٹ سنہ 2011 میں حکومت کے خلاف بغاوت کے آغاز سے اب تک کے دورانیے میں پیش آنے والے ایسے واقعات کے عینی شاہدین سے انٹرویوز کے بعد تیار کی گئی ہے۔

رپورٹ کے مطابق ہزاروں قیدی اس عرصے میں فریقین کی حراست میں مارے گئے۔

تفتیش کاروں نے شبہ ظاہر کیا ہے کہ اس عرصے میں ایک وقت ایسا بھی تھا جب شامی حکومت نے دسیوں ہزار مخالفین کو حراست میں لیا تھا۔

رپورٹ نے شام میں قیدیوں سے متعلق صورتحال کو انسانی حقوق کے تحفظ کا ایک بڑا اور فوری حل طلب بحران قرار دیا ہے۔

رپورٹ کے مطابق بچ جانے والوں نے تشدد کی ہولناک منظر کشی کی ہے۔

شام میں جاری خانے جنگی میں اب تک کم سے کم ڈھائی لاکھ جانیں ضائع ہو چکی ہیں۔46 لاکھ افراد ملک چھوڑنے پر مجبور ہوئے جبکہ ساڑھے 13 لاکھ افراد ملک میں موجود ہیں جنھیں انسانی امداد کی اشد ضرورت ہے۔

گو کہ اقوامِ متحدے کے تفتیش کاروں نے حکومت اور باغیوں دونوں پر ہی جنگی جرائم کا الزام لگایا ہے تاہم حکومتی اداروں کی تحویل میں زیادہ قیدی ہیں۔

مارچ 2011 کے بعد سے حکومت کی جانب سے ان عام شہریوں کو گرفتار کیا جا رہا ہے جو یا تو حزبِ مخالف کے حامی ہیں یا حکومت کی مرضی کے مطابق اس سے وفادار نہیں ہیں۔

بتایا گیا ہے کہ زیادہ تر ہلاکتیں شامی انٹیلیجنس کے زیرِ انتظام قید خانوں میں ہوئیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption دولتِ اسلامیہ کے بارے میں بتایا گیا کہ اس نے بڑی تعداد میں مختلف مقامات پر لوگوں کو غیر قانونی طور پر حراست میں رکھا ہوا ہے جہاں پر تشدد اور قتل معمول ہے

اقوامِ متحدہ میں انسانی حقوق کے تفتیش کار سرگیو پینھیرو کا کہنا ہے کے ’شامی حکومت نے جان بوجھ کر قید خانوں کی حالت کو اتنا بد ترین رکھا کے قیدیوں کے لیے یہ جان لیوا ثابت ہو اور وہ اس بات سے آگاہ تھے کہ اس سے بڑے پیمانے پر قیدیوں کی جانیں جائیں گی۔ ‘

ان کا مزید کہنا تھا ’ریاستی پالیس پر عمل پیرا ہوتے ہوئے کیے گئے یہ عوامل قتلِ عام کا باعث بنے جو انسانیت کے خلاف جرم ہے۔‘

رپورٹ میں باغیوں پر بھی الزام عائد کیا گیا ہے کہ انھوں نے قید کیے گئے فوجیوں کا قتل کیا۔ ان باغیوں میں دولتِ اسلامیہ اور النصرہ سمیت دیگر گروہ بھ شامل ہیں۔

دولتِ اسلامیہ کے بارے میں بتایا گیا کہ اس نے بڑی تعداد میں مختلف مقامات پر لوگوں کو غیر قانونی طور پر حراست میں رکھا ہوا ہے۔ جہاں پر تشدد اور قتل معمول ہے۔

یہاں پر غیر قانونی عدالتوں میں سزائے موت سنائے جانے کے بعد لو گوں کو مارا جاتا ہے۔

اسی بارے میں