اسرائیلی خاتون اوّل ملازمین سے بدسلوکی کی مجرم

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption سارہ نتن یاہو نے ان الزامات کو جھوٹ قرار دیا اور کہا کہ وہ عملے کے ساتھ مہذب رہیں

اسرائیلی وزیرِ اعظم بنیامن نتن یاہو کی اہلیہ کو ایک لیبر کورٹ میں گھریلو ملازم کے ساتھ بد سلوکی کا مجرم پایا گیا ہے۔

یہ مقدمہ ان کے گھریلو ملازم نے ان کے خلاف قائم کیا تھا۔

عدالت نے مینی نفتالی کا یہ دعوی تسلیم کیا کہ ان کی توہین کی گئی اور ان کا زبانی کلامی استحصال کیا گیا جس کے مداوے کے طور انھیں 43700 ڈالر ادا کرنے کا حکم دیا گیا ہے۔

عدالت نے فیصلے میں کہا کہ سارہ نتن یاہو اشتعال میں آئیں اور ان کے مطالبے نے ملازمین کے لیے توہین آمیز صورتحال پیدا کی۔

سارہ نتن یاہو نے ان الزامات کو جھوٹ قرار دیا اور کہا کہ وہ عملے کے ساتھ مہذب رہیں۔

اسرائیلی وزیرِ اعظم کے دفتر نے اس فیصلے پر کوئی بیان نہیں دیا۔

ماضی میں میں وزیرِ اعطم کے دفتر کی جانب سے مسز نتن یاہو پر توہینِ آمیز رویے کے الزمات کی تردید کی جاتی رہی ہے۔

اس سے پہلے سارہ نتین یاہو کے خلاف ایک گھیلو ملازم کے خلاف استحصالی رویے کا مقدمہ عدالت کے باہر ہی حل کر لیا گیا تھا۔

بدھ کو آنے والے فیصلے کے مطابق لیبر کورٹ میں یہ ثابت ہوا کے مسز نتن یاہو کے خلاف بدسلوکی کے الزامات درست ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption 40 صفحات پر مستمل فیصلے کے مطابق سارہ کے خلاف ثابت ہونے والے الزامات میں بے تحاشا مطالبات کرنا، توہین، بدسلوکی، اور اشتعال میں چلّانا شامل ہیں

عدالت میں پیش کیے گئے شواہد کے مطابق وزیرِ اعظم کی رہائش گاہ پر سارہ نتن یاہوں ملازمین نے بدسلوکی کرتی تھیں۔

40 صفحات پر مستمل فیصلے کے مطابق سارہ کے خلاف ثابت ہونے والے الزامات میں بے تحاشا مطالبات کرنا، توہین، بدسلوکی، اور اشتعال میں چلانا شامل ہیں۔

نفتالی کے مطابق ایک مرتبہ مسز نتن یاہو نے انھیں صبح کے تین بجے بلا کر اس بات پر کھری کھوٹی سنائیں کہ انھوں نے دودھ کے ڈبے گتے کی پیٹی میں لانے کے بجائے پلاسٹک کے تھیلے میں کیوں لائے۔

خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس کے مطابق ایک مرتبہ سارہ نتن یاہو نے ایک مرتبہ گل دان زمین پر دے مارا اور کہا کہ اس میں لگے پھول تازہ نہیں ہیں۔

نفتالی نے سنہ 2012 میں وزیرِ اعظم کی یرو شلم میں واقع رہائش گاہ پر 20 ماہ کی ملازمت کے بعد استعفی دے دیا تھا۔

اسی بارے میں