نائجیریا کی خیمہ بستی میں خود کش حملہ 56 ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption حملے کا نشانے بننے والے ڈیکوا کیمپ میں کم سے کم 50000 افراد مقیم ہیں

نائجیریا کے شمال مشرق میں شدت پسند تنظیم بوکو حرام کی کارروائیوں کی وجہ سے بے گھر ہونے والے افراد کے ایک امدادی کیمپ پر خود کش حملے میں کم سے کم 56 افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

دھماکے کرنے والی دونوں خواتین خود کش بمبار تھیں اور انھوں نے خود کو اس وقت دھماکے سے اڑایا جب لوگ راشن کے لیے قطار میں کھڑے تھے۔

نائجیریا: بوکوحرام کے حملے میں 50 شہری ہلاک بوکو حرام سے بچ جانے والے افراد کی آب بیتی

برونو ریاست میں قائم اس کیمپ پر ہونے والے میں زیادہ تر خواتین اور بچے ہلاک ہوئے۔

نائجیریا کی فوج ریاست ان عسکریت پسندوں سے آزاد کروانے کے لیے کارروائیاں کر رہی ہے ایسے میں بوکو حرام کے شدت پسند شہریوں کو نشانہ بنا رہے ہیں۔

اس گروہ کی جانب سے چھ سال قبل شروع کی گئی بغاوت کے باعث اب تک کم سے کم 20000 افراد لقمۂ اجل بن چکے ہیں جبکہ 20 لاکھ لوگ نقل مکانی پر مجبور ہوئے ہیں۔

حملے کا نشانے بننے والے ڈیکوا کیمپ میں کم سے کم 50000 افراد مقیم ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption دونوں خواتین خود کش بمبار تھیں اور انھوں نے خود کو اس وقت دھماکے سے اڑایا جب لوگ راشن کے لیے قطار میں کھڑے تھے

یہ حملہ منگل کی صبح کیا گیا جبکہ اب اس کی تفصیلات سامنے آ رہی ہیں۔ ایک مقامی اہلکار نے بی بی سی کو بتایا کہ اس حملے میں کم سے کم 67 افراد زحمی بھی ہوئے ہیں۔

ریاست برونو کے ایک اعلی اہلکار نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا کہ بموں سے لیس تین خواتین خیمہ بستی میں داخل ہوئی تھیں۔

ان کے بقول تیسری خاتون نے اس وقت خود کو حکام کے حوالے کر دیا جب اس نے یہ دیکھا کہ کیمپ میں اس کے اپنے والدین اور بہن بھائی بھی مقیم ہیں۔

گذشتہ برس نائجیریا ، کیمرون اور چاڈ سمیت متعدد ریاستوں نے شمال مشرقی نائجیریا کو بوکو حرام کے قبضے سے چھڑانے کے لیے فوجی کارروائی کا آغاز کیا تھا۔

اسی بارے میں