نیروبی کی سڑکوں پر چار مفرور شیروں کی تلاش

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption مفرور شیروں کی تلاش کے لیے اب ہیلی کاپٹروں کی مدد لی جا رہی ہے

افریقی ملک کینیا میں جنگلی حیات کے محکمے کے ارکان کو کم از کم چار ایسے شیروں کی تلاش ہے جو دارالحکومت نیروبی کے نواح میں واقع نیشنل پارک سے بھاگ نکلے ہیں۔

تین شیر اور ایک شیرنی جمعرات کی شب بھاگنے میں کامیاب ہوئے اور انھیں جمعے کی صبح شہر کی مرکزی شاہراہوں پر دیکھا گیا۔

کینیا کی وائلڈ لائف سروس نے نیروبی کے شہریوں سے کہا ہے کہ وہ اگر شیروں کو دیکھیں تو ان سے دور رہیں اور ان کے بارے میں فوراً حکام کو مطلع کریں۔

اس سلسلے میں حکام نے ایک فری ٹیلیفون لائن بھی قائم کر دی ہے۔

کینیا وائلڈ لائف سروس کے پال اڈوتو نے ٹوئٹر پر عوام سے کہا کہ ’شیر خطرناک جنگلی جانور ہیں۔ ان کا سامنا یا مقابلہ کرنے سے گریز کریں۔‘

نیروبی میں بی بی سی کے نامہ نگار عابدی نور عدن نے بتایا ہے کہ نیروبی نیشنل پارک اور شہر کے گنجان آباد علاقوں کے درمیان صرف ایک سڑک کا فاصلہ ہے۔

نیشنل پارکے وارڈنز نے بی بی سی کو بتایا ہے کہ چاروں شیروں کی تلاش کے لیے اب ہیلی کاپٹروں کی مدد لی جا رہی ہے۔

اس پارک میں 30 کے قریب شیر ہیں تاہم کے ڈبلیو ایس کے پال اڈوتو نے ان خبروں کو بےبنیاد قرار دیا ہے کہ فرار ہونے والے شیروں کی تعداد چھ ہے۔

انھوں نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ شہری ان شیروں کو روکنے یا پکڑنے کی کوشش کر سکتے ہیں کیونکہ ایسے واقعات ماضی میں پیش آ چکے ہیں۔

اسی بارے میں