اسلام سے ’نفرت‘ پر ٹرمپ اور مارکو روبیو آمنے سامنے

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption مارکو روبیو کا کہنا تھا کہ اسلام کو بنیاد پرستی سے مسئلہ تو ہے لیکن بہت سے مسلمان امریکی ہونے پر فخر محسوس کرتے ہیں

امریکہ میں رپبلکن پارٹی کا صدارتی امیدوار بننے کی دوڑ میں شامل مارکو روبیو نے ریاست فلوریڈا کے شہر میامی میں ایک ٹیلی ویژن مباحثے کے دوران ڈونلڈ ٹرمپ کے یہ کہنے پر کہ اسلام ’امریکہ سے نفرت کرتا ہے‘ اُن پر سخت تنقید کی۔

مارکو روبیو کا کہنا تھا کہ اسلام کو بنیاد پرستی سے مسئلہ تو ہے لیکن بہت سے مسلمان امریکی ہونے پر فخر محسوس کرتے ہیں۔

انھوں نے کہا ’صدور جو کچھ دل میں آئے وہ نہیں کہہ سکتے، کیوں کہ اُن کی باتوں کی اہمیت ہوتی ہے۔‘

رپبلکن پارٹی کے رہنماؤں نے اپنی پارٹی کے چاروں اُمیدواروں سے مہذب بحث و مباحثے کی اپیل کی تھی اور اس بار اس کا انھوں نے اس کا پاس بھی رکھا۔

گذشتہ دنوں ٹیلی ویژن پر ہونے والی ایک بحث امیدواروں نے ایک دوسرے پر توہین آمیز ذاتی حملے کیے تھے۔

لیکن اسلام کے مسئلے پر ڈونلڈ ٹرمپ اور دیگر اُمیدواروں کے درمیان بڑا واضح اختلاف نظر آیا۔ اُن کے دیگر تینوں حریفوں نے اُن کی اس بات سے اتفاق نہیں کیا کہ شدت پسندوں کے خاندانوں کو ہلاک کر دینا چاہیے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption گذشتہ دنوں ٹیلی ویژن پر ہونے والی ایک بحث امیدواروں نے ایک دوسرے پر توہین آمیز ذاتی حملے کیے تھے

ٹرمپ اپنے ان خیالات پر قائم رہے جس میں انھوں نے کہا تھا کہ ’میرے خیال سے اسلام ہم سے نفرت کرتا ہے، ایک زبردست نفرت پائی جاتی ہے۔‘ انھوں نے کہا کہ وہ سیاسی مصلحت کی پروا نہیں کرتے۔

لیکن فلوریڈا کے سینیٹر روبیونے کہا: ’مجھے سیاسی طور پر درست ہونے میں کوئی دلچسپی نہیں ہے۔ میں صرف درست ہونے میں دلچسپی رکھتا ہوں۔‘

رپبلکن پارٹی کی جانب سے صدارتی امیدوار کی دوڑ میں شامل روبیو نے اپنے آبائی شہر میامی میں سٹیج تو سنبھالا لیکن وہ اب بھی ڈونلڈ ٹرمپ اور ٹیڈ کروز کے مقابلے میں خاصے پیچھے ہیں۔

ٹرمپ نے بین کارسن کی جانب سے اسلام کے حوالے سے دیے گیے ایک اہم نکتے کی توثیق کی ہے۔ بین کارسن گذشتہ ہفتے مباحثے سے کچھ گھنٹے قبل صدارتی دوڑ سے دست بردار ہو گئے تھے۔

ایک اور دلچسپ مباحثہ گذشتہ ہفتے امریکی صدر براک اوباما کے کیوبا کے دورے سے متعلق ہوا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption رپبلکن پارٹی کی جانب سے صدارتی امیدوار کی دوڑ میں شامل روبیو نے اپنے آبائی شہر میامی میں سٹیج تو سنبھالا لیکن وہ اب بھی ڈونلڈ ٹرمپ اور ٹیڈ کروز کے مقابلے خاصے پیچھے ہیں

روبیو نے، جن کے والدین کیوبا کے تارکینِ وطن تھے، دونوں ممالک کے درمیان حالیہ دنوں میں تعلقات کو معمول پر لانے کی مخالفت کرتے ہوئے کہا تھا کہ کیوبا کو پہلے انسانی حقوق کے حوالے سے خود کو بہتر بنانا چاہیے۔

لیکن ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا تھا کہ وہ امریکہ اور کیوبا کے درمیان معاہدے کے مخالف نہیں ہیں تاہم امریکہ کے لیے یہ معاہدہ زیادہ بہتر شرائط پر ہونا چاہیے۔

ادھر ڈیموکریٹک پارٹی کی جانب سے برنی سینڈرز اور ملک کی سابق وزیرِ خارجہ ہلیری کلنٹن پارٹی کی جانب سے نامزدگی حاصل کرنے کے لیے ایک دوسرے کے مدِمقابل ہیں۔

اب تک ہلیری کلنٹن سینڈرز سے خاصی آگے ہیں اگرچہ سینڈرز کی مہم توقع سے زیادہ مضبوط ثابت ہورہی ہے۔

دونوں جماعتیں جولائی میں ہونے والے کنونشن میں اپنے اپنے نامزد اُمیدواروں کا فیصلہ کریں گی۔ جس کے بعد نومبر میں امریکی اِن اُمیدواروں میں سے اپنے نئے صدر کا انتخاب کریں گے۔

اسی بارے میں