آئیوری کوسٹ میں تفریحی مقام پر حملہ، 16 ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ r
Image caption عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ نقاب پوش حملہ آووروں نے پہلے ساحل پر موجود لوگوں پر فائرنگ کی اس کے بعد وہ قریبی ہوٹلوں میں داخل ہو گئے

افریقی ملک آئیوری کوسٹ کے مشہور ساحلی تفریحی مقام گرینڈ باسم پر شدت پسندوں کے حملے میں کم از کم 16 افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔

ملک کے صدر نے بتایا ہے کہ ہلاک ہونے والوں میں 14 شہری اور دو فوجی اہلکار شامل ہیں۔

اتوار کو حملے کے بعد جائے وقوع پر میڈیا سے بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کارروائی میں چھ حملہ آوروں کو بھی ہلاک کر دیا گیا ہے۔

شدت پسند تنظیم القاعدہ فی المغرب نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے

سوشل میڈیا پر پوسٹ کی جانے والی تصاویر میں خون میں لت پت لاشوں کو دیکھا جا سکتا ہے۔

عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ نقاب پوش حملہ آووروں نے پہلے ساحل پر موجود لوگوں پر فائرنگ کی اس کے بعد وہ قریبی ہوٹلوں میں داخل ہو گئے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption گرینڈ باسم نامی یہ ساحلی تفریحی مقام دارالحکومت عابدجان سے تقریباً 40 کلومیٹر کے فاصلے پر ہے

عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ نامعلوم حملہ آور جو کے بڑی تعداد میں اسلحے سے لیس تھے نے ایٹوائل ڈو سڈ ہوٹل میں موجود مہمانوں پر فائرنگ کی۔

گرینڈ باسم نامی یہ ساحلی تفریحی مقام دارالحکومت عابدجان سے تقریباً 40 کلومیٹر کے فاصلے پر ہے اور یہ مقام مقامی اور غیرملکی افراد میں کافی مقبول ہے۔

ایک اور عینی شاہد سلمان کماگیٹ نے بتایا کہ ’میں نے لوگوں کو ساحل چھوڑ کر بھاگتے ہوئے دیکھا۔‘

بی بی سی کے نامہ نگار معاد جولیئن کا کہنا ہے کہ آئیوری کوسٹ مغربی افریقہ کے ان ممالک میں سے ہے جہاں خود کو دولت اسلامیہ کہلانے والی شدت پسند تنظیم کے جنگجوؤں کی جانب سے حملے کیے جانے کا خطرہ موجود ہے۔

اس سے پہلے مغربی افریقہ کے دو دیگر ممالک میں بھی لگژری ہوٹلز پر حملے کیے گئے تھے اور نومبر میں مالی جبکہ جنوری میں برکینا فاسو کو نشانہ بنایا گیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

.