برسلز میں ہائی الرٹ، مفرور افراد کی تلاش جاری

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption بیلجیئم میں حکام نے تاحال منگل کو کارروائی میں ہلاک کیے جانے والے حملہ آور کی شناخت ظاہر نہیں کی ہے

بیلجیئم اور فرانس میں پولیس ان مشتبہ افراد کی تلاش کا عمل جاری رکھے ہوئے جن کے بارے میں امکان ہے کہ وہ منگل کو برسلز میں ہونے والی کارروائی کے دوران فرار ہوگئے تھے۔

بیلجیئم کے دارالحکومت برسلز میں فرانسیسی اور بیلجیئم کی سکیورٹی فورسز نےمنگل کی شام ایک آپریشن کیا تھا جس میں ایک مشتبہ حملہ آور ہلاک اور چار سکیورٹی اہلکار زخمی ہوئے تھے۔

یہ چھاپہ گذشتہ برس پیرس میں ہونے والے حملے کی تحقیقات کی ایک کڑی تھے۔ پیرس میں نومبر میں شدت پسندوں کے حملوں میں 130 افراد ہلاک ہوئے تھے۔

اس کارروائی کے بعد مقامی پولیس نے کہا تھا کہ وہ دو مشتبہ افراد کی تلاش کر رہے ہیں جو چھت پر سے فرار ہوئے ہیں۔

سکیورٹی فورسز کی اس کارروائی کے بعد برسلز میں قانون نافذ کرنے والے اہلکاروں کو ہائی الرٹ کر دیا گیا ہے جبکہ ملک کی قومی سلامتی کونسل کا اجلاس بھی بدھ کو منعقد ہو رہا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption برسلز میں قانون نافذ کرنے والے اہلکاروں کو ہائی الرٹ کر دیا گیا ہے

بیلجیئم میں حکام نے تاحال منگل کو کارروائی میں ہلاک کیے جانے والے حملہ آور کی شناخت ظاہر نہیں کی ہے تاہم حکام یہ واضح کر چکے ہیں کہ وہ پیرس حملوں کے سلسلے میں مطلوب عبدالسلام صالح نہیں ہے۔

گذشتہ سال نومبر میں پیرس میں ہونے والے شدت پسندوں کے حملوں میں ملوث اکثر شدت پسندوں کی نشاندہی ہوگئی ہے اور زیادہ تر مشتبہ افراد یا تو حملوں کے دوران ہلاک ہوگئے اور بعض پولیس کی کارروائیوں میں مارے گئے۔

ان حملوں کے سلسلے میں دو مشتبہ افراد صلاح عبدالسلام اور محمد عبرانی تاحال مفرور ہیں۔

پیرس میں حملوں کی تحقیقات کے سلسلے میں بیلجیئم میں 11 افراد کو گرفتار کیا گیا ہے اور آٹھ افراد حراست میں ہیں۔

اسی بارے میں