مصر میں ’دولتِ اسلامیہ کے حملے میں 13 پولیس اہلکار ہلاک‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption حکام کا کہنا ہے کہ سرکاری فورسز نے حملہ کرنے والے پانچ جنگجوؤں کو ہلاک کر دیا ہے

مصر کے خطے جزیرہ نما سینا میں شدت پسند تنظیم دولت اسلامیہ نے 13 پولیس اہلکاروں کو ہلاک کرنے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔

حکام کے مطابق ال آرش شہر میں ایک چیک پوسٹ کو مارٹر سے نشانہ بنایا گیا تھا۔

تاہم دولت اسلامیہ کا کہنا ہے کہ پہلے ایک خودکش کار بم دھماکہ کیا گیا اور اس کے بعد مسلح افراد نے حملہ کیا۔

خیال رہے کہ سنہ 2013 میں فوج کی جانب سے صدر محمد مرسی کو اقتدار کا ہٹائے جانے کے بعد سینا میں سینکڑوں پولیس اہلکار مارے جاچکے ہیں۔

مصر کی وزارت داخلہ کا کہنا تھا کہ شمالی سینا میں صفا چیک پوسٹ کو نشانہ بنایا ہے۔

عینی شاہدین کے مطابق ایک زوردار دھماکے کی آواز سنی گئی اور شہر کو سیل کر دیا گیا۔

حکام کا کہنا ہے کہ سرکاری فورسز نے حملہ کرنے والے پانچ جنگجوؤں کو ہلاک کر دیا ہے۔

دولت اسلامیہ کی جانب سے ٹوئٹر پر جاری کیے گئے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ یہ حملہ ’چیک پوسٹوں پر مسلمان خواتین کی تلاشی اور بے عزتی کرنے کی جواب میں سلسلہ وار کارروائیوں کا حصہ تھا۔‘

واضح رہے کہ دولت اسلامیہ گذشتہ سال اکتوبر میں سینا میں روسی مسافر طیارے کو نشانہ بنانے کی دعویٰ بھی کرتی ہے، جس میں 224 افراد ہلاک گئے تھے۔

اسی بارے میں