شامی فوج کا پیلمائرا کے قدیم شہر پر قبضے کا دعویٰ

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption یہ آثارِ قدیمہ عالمی ثقافتی ورثے کا حصہ ہیں

شام میں حکومتی فورسز پیلمائرا کے قدیم شہر میں داخل ہو گئی ہیں جس پر گذشتہ سال نام نہاد دولت اسلامیہ کے شدت پسندوں نے قبضہ کر لیا تھا۔

شام کے سرکاری ٹی وی چینل نے شامی افواج کے پیلمائرا میں داخل ہونے کی اطلاع دی ہے۔

برطانوی خبر رساں ادارے روئٹرز نے شام کے حالات پر نظر رکھنے والے ایک مبصر گروپ کے حوالے سے خبر دی ہے کہ پیلمائرا شہر کے مضافات میں لڑائی جاری ہے۔

روس کے فضائی حملوں کی مدد سے شام کی سرکاری افواج نے پیلمائرا پر قبضہ حاصل کرنے کے لیے گذشتہ مہینے زمینی کارروائی شروع کی تھی۔

پیلمائرا کا شہر دارالحکومت دمشق اور مشرقی شہر دیر الزور کے درمیان دفاعی اعتبار سے انتہائی اہم علاقے میں واقع ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption پیلمائرا کے کھنڈرات دو ہزار سال قدیم ہیں

دولت اسلامیہ کے شدت پسندوں نے یونسکو کی طرف سے عالمی ورثے قرار دیے جانے والے قدیم شہر پیلمائرا اور اس کے قریب جدید شہر پر گذشتہ سال مئی میں قبضہ کیا تھا۔

ان آثار قدیمہ پر قبضہ کرنے کے بعد شدت پسندوں نے دو ہزار سال پرانی عبادت گاہ، ایک مہراب اور ایک مینار کو تباہ کر دیا تھا جس پر دنیا بھر نے شدید تنقید کی تھی۔

اس انتہا پسند جہادی گروپ نے ہمسایہ ملک عراق میں بھی قبل از اسلام کے دور سے تعلق رکھنے والے کئی آثار کو نقصان پہنچایا ہے اور ان کا یہ کہنا ہے کہ یہ بدت کی نشانیاں ہیں۔

اقوام متحدہ کے ادارے یونسکو نے پیلمائرا کے آثار کو نقصان پہنچانے کو جنگی جرم قرار دیا تھا۔

سرکاری نیوز چینل الاخباریہ کا کہنا ہے کہ سرکاری فورسز شہر کے مغرب میں ایک ڈسٹرک پر قبضہ حاصل کر لیا ہے۔ لیکن آزاد ذرائع سے ان خبروں کی تصدیق نہیں ہو سکی ہے۔

اسی بارے میں