اقوام متحدہ کے سینیئر افسر کی ڈونلڈ ٹرمپ پر سخت تنقید

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption ذید رعد الحسین نے ڈونلڈ ٹرمپ کا نام تو نہیں لیا لیکن انہیں متعصب اور کٹّر پن سے تعبیر کرتے ہوئے کہا کہ کٹّرپن مضبوط لیڈر شپ کا ثبوت نہیں ہے

اقوام متحدہ میں انسانی حقوق کے ادارے کے ہائی کمشنر نے امریکی صدارتی امیدوار کی دوڑ میں شامل ریپبلکن پارٹی کے امیدوار ڈونلڈ ٹرمپ کی پالیسیوں کی سخت الفاظ میں مذمت کی ہے۔

کمشنر زید رعد الحسین نے ڈونلڈ ٹرمپ کا نام تو نہیں لیا لیکن مسلمانوں کے تئیں ان کی پالیسز اور ٹارچر کے تعلق سے ان کے موقف پر سخت نکتہ چینی کرتے ہوئے انھیں متعصب اور کٹّر پن سے تعبیر کیا۔

مسٹر حسین نے کہا ’ کٹّرپن مضبوط لیڈر شپ کا ثبوت نہیں ہے۔‘

دوسرے ریپبلکن امیدوار ٹیڈ کروز کے اس موقف پر بھی انھوں نے نکتہ چینی کی جس میں کروز نے مسلمانوں کے آس پڑوس میں نگرانی رکھنے کی بات کہی تھی۔

رعد الحسین نے اوہائیو میں سامعین سے بات کرتے ہوئے کہا ’'نفرت انگیز بیانات، اشتعال انگیزی اور دوسروں کو دبانے کی باتیں نہ تو ہنسانے والی تفریح ہے اور نہ ہی سیاسی مفاد کے لیے کوئی باوقار گاڑی۔‘

انھوں نے مزید کہا ’اس ملک کے صدر بننے کے لیے ہونے والے مقابلے میں سبقت لینے والے ایک امید وار نے چند ماہ قبل ٹارچر کی اپنی پرجوش حمایت کا اعلان کیا تھا۔۔۔۔۔۔ وہ معلومات حاصل کرنے کے لیے جو شاید ان کے پاس ہوں بھی نہ اس کے لیے لوگوں کو ناقابل برداشت تکلیف پہنچانا۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption اپنی مہم کے دوران ڈونلڈ ٹرمپ نے شدت پسندی کے الزام میں افراد گرفتار افراد کو ایذائیں دینے کی حمایت کی ہے

اپنی مہم کے دوران ڈونلڈ ٹرمپ نے شدت پسندی کے الزام میں افراد گرفتار افراد کو ایذائیں دینے کی حمایت کرتے ہوئے کہا تھا کہ ’ٹارچر کام کرتا ہے‘ اور اگر وہ اقتدار میں آئے تو اسے دوبارہ سخت ترین فارم میں نافذ کریں گے۔

بش انتظامیہ نے شدت پسندوں سے تفتیش کے دوران پانی میں ڈبونے اور دیگر سخت ترین ایذائیں دینے کا طریقہ اپنایا تھا جس پر صدر اوباما نے پابندی عائد کر دی تھی۔

مسٹر ٹرمپ نے اس سے بھی سخت ایذائیں دینے کے طریقے نافذ کرنے کی بات کہی ہے جس کی کئی عالمی رہنماؤں نے نکتہ چینی کی ہے۔

مبصرین کا کا کہنا ہے اقوام متحدہ کے اتنے سنیئر افسر کی جانب سے اتنی سخت تنقید کے باوجود بھی نیو یارک کے ارب پتی ڈونلڈ ٹرمپ باز آنے والے نہیں ہیں کیونکہ وہ تو خود اقوام متحدہ پر نکتہ چینی کرتے رہے ہیں۔

مارچ میں اسرائیلی کارکنان سے بات چيت کے دوران ٹرمپ نے کہا تھا ’اقوام متحدہ جمہوریت کا دوست نہیں ہے۔ یہ تو امریکہ کا بھی دوست نہیں ہے جبکہ سب کو پتہ ہے کہ اس کا دفتر امریکہ میں ہی ہے۔ اور اسرائیل کو تو یقینی طور پر دوست نہیں ہے۔‘

اسی بارے میں