ادلب میں ’شامی فوج کی بمباری‘ سے 44 افراد ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption مراۃ النمان میں دوپہر کے وقت ایک سبزیوں کے بازار کو نشانہ بنایا گیا

شام میں انسانی حقوق کے کارکنوں کا کہنا ہے کہ ادلب صوبے میں باغیوں کے زیرِ قبضہ علاقوں میں حکومتی فورسز کے فضائی حملوں میں کم سے کم 44 افراد ہلاک اور درجنوں زخمی ہوگئے ہیں۔

سیریئن آبزرویٹری فار ہیومن رائٹس کا کہنا ہے کہ 37 افراد مراۃ النمان میں ہلاک ہوئے جبکہ سات افراد قریبی علاقے کافرانبل میں مارے گئے۔

اس مبصر گروپ کا مزید کہنا تھا کہ مرنے والوں میں تین بچے بھی شامل ہیں اور ہلاکتوں کی تعداد میں اضافے کا خدشہ ہے۔

ملک میں بڑھتا ہوا تشدد سات ہفتوں سے جاری جنگ بندی کے عارضی معاہدے کو ناکامی کے دہانے پر لے آیا ہے۔

انسانی حقوق کے شامی ادارے نے منگل کو کی جانے والی اس بمباری کو قتل عام قرار دیا ہے۔

شام میں شہری دفاع کے ایک رضاکار احمد شیخو نے خبر رساں ادارے روئٹرز کو بتایا کہ مراۃ النمان میں دوپہر کے وقت ایک سبزیوں کے بازار کو نشانہ بنایا گیا۔ جبکہ اسے وقت دس کلو میٹر کے فاصلے پر کافرانبل میں بھی ایک بازار کو نشانہ بنایا گیا۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ دس گاڑیوں میں لاشوں اور زخمیوں کو منتقل کیا گیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption شامی حکومت کا الزام ہے کہ باغی فورسز معاہدے کی خلاف ورزی کر رہی ہیں

اس سے قبل شامی حزبِ اختلاف کی مرکزی تنظیم نے کہا تھا وہ شامی حکومت کی جانب سے معاہدے کی خلاف ورزی کے بعد جینوا میں اقوامِ متحدہ کی قیادت میں جاری امن مذاکرات سے الگ ہو رہی ہے۔

امن مذاکرات پہلے ہی متزلزل تھے اور حلب میں جاری لڑائی کی وجہ سے انھیں خطرہ لاحق تھا۔

ریاض حجاب کا کہنا تھا کہ ایسے میں جب لوگ مر رہے ہیں ان کی مذاکراتی کمیٹی بات چیت میں شامل نہیں ہو سکتی۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ عمل محض ان کی مشکلات میں اضافہ کر رہا ہے۔

شامی حکومت کا الزام ہے کہ باغی فورسز معاہدے کی خلاف ورزی کر رہی ہیں۔

روس کے وزیرِ خارجہ سرگے لاوروف کا اصرار ہے امن مذاکرات رکے نہیں ہیں۔ ان کے بقول حکومت اور دیگر تنظیمیں ان مذاکرات میں شامل ہیں۔ روس شامی حکومت کا اتحادی ہے۔

اسی بارے میں