کینیا میں عمارت گرنے سے سات افراد ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ AP

کینیا کے دارالحکومت نیروبی میں بارش کے نتیجے میں منہدم ہونے والی سات منزلہ عمارت کے ملبے میں پھنسے درجنوں افراد کی تلاش کا کام جاری ہے۔

ٹی وی کوریج میں ہروما رہائشی عمارت کے پاس ایک مجمع نظر آ رہا ہے اور امدادی کارکن پھنسے ہوئے افراد کو بچانے کی کوشش کر رہے ہیں۔

عمارت گرنے کے نتیجے میں اب تک سات افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

عالمی تنظیم ریڈ کراس نے ہنگامہ خیز منظر پر تنقید کی ہے۔

کینیا کی پولیس نے کے ٹی این نیٹ ورک کو بتایا کہ انھوں نے کم سے کم 12 افراد کو بچا لیا ہے۔

یہ واضح نہیں ہے کہ اس چھ منزلہ کنکریٹ کی عمارت کے نتیچے کتنے لوگ ہیں۔

بارش کے سبب مٹی کے تودے گرنے کے واقعات رونما ہونے سے متعدد گھر اور سڑکیں بہہ گئی ہیں۔

ہروما ایک غریب ضلع ہے جہاں کی سڑکیں تنگ ہیں جس کے نتیجے میں امدادی کارکنوں کو وہاں پہنچنے میں دشواری کا سامنا ہے۔

فوج نے کینیا کے ریڈ کراس کے ساتھ ملک کر امدادی کاموں کی نگرانی اپنے ذمے لے لی ہے۔

ریڈ کراس کے ترجمان وینینٹ این ڈیگیلا نے کہا: ’ہم لوگ اب تک ان لوگوں کی آوازیں سن رہے ہیں جو اس عمارت کے نیچے دبے ہوئے ہیں۔‘

’ابھی تک ہم 12 افراد کو بچانے میں کامیاب ہوئے ہیں اور اس بات کے شواہد ہیں کہ ملبے کے نیچے کئی لوگ موجود ہیں۔‘

کینیا میں عمارتوں کی خراب تعمیر اہم مسئلہ ہے ۔

گذشتہ سال کیے جانے والے ایک سروے کے مطابق دارالحکومت نیروبی میں نصف سے زیادہ گھر رہائش کے قابل نہیں ہیں۔

نیروبی میں مکان کے بڑھتے ہوئے مطالبے کے نتیجے میں جائیداد کو فروغ دینے والے ڈیلر کم خرچ اور منافع زیادہ کرنے کے لیے ضابطے کو نظرانداز کر دیتے ہیں۔

اسی بارے میں