یورپ اپنی راہ لے ہم اپنی: اردوغان کا یورپی یونین کو جواب

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

ترکی کے صدر رجب طیب اردوغان نے یورپی یونین کو کہا ہے کہ ترکی اپنے شہریوں کے لیے یورپ میں ویزا کے بغیر سفر کی اجازت کے بدلے میں اپنے ملک کے دہشت گردی کے قوانین میں تبدیلی کرنے کے لیے تیار نہیں ہے۔

٭ ’صدر سے اختلافات‘، ترک وزیرِ اعظم کا مستعفی ہونے کا اعلان

رجب طیب اردوغان نے یہ بیان احمد داؤد اوغلو کے وزیر اعظم کے عہدے سے مستعفی ہونے کے ایک دن بعد دیا ہے۔ یورپی یونین سے معاہدہ داؤد اوغلو ہی نے طے کیا تھا۔

یورپی یونین کا کہنا ہے کہ ترکی کو دہشت گردی کی اپنی تشریح کو اور زیادہ واضح کرنا ہو گا اگر وہ چاہتا ہے کہ اس کے شہریوں کو یورپ میں ویزا کے بغیر سفر کی سہولت دی جائے اور جو دونوں ملکوں کے درمیان تارکین وطن کے بحران کو حل کرنے کے لیے ہونے والے معاہدے کا حصہ تھا۔

تارکین وطن کے بحران کو حل کرنے کے لیے ہونے والے وسیع تر معاہدے کے تحت یونان کے ساحلوں پر پہنچنے والے مہاجرین جن میں شام سے تعلق رکھنے والوں کی اکثریت شامل ہے کو واپس ترکی پہنچایا جائے گا اور اس کے عوض ترکی کو اضافی امداد اور دیگر کئی مراعات دی جائیں گی۔

ترکی کے شہریوں کے لیے ویزا کے بغیر یورپ کے سفر میں شنگن معاہدے کی حدود میں شامل 22 ملکوں میں مختصر عرصے قیام کی اجازت شامل تھی۔

ترکی کے حقائق

7 کروڑ 87 لاکھ

آبادی

  • بے روزگاری 11.1%

  • رجسٹرڈ شامی مہاجرین ستائیس لاکھ پچاس ہزار

  • دنیا میں شہریوں آزادیوں کی انڈکس پر 180ملکوں میں 151

روائٹرز

اطلاعات کے مطابق داؤد اوغلو نے اردوغان کی طرف سے صدر کو زیادہ اختیارات دینے کی تجویز کی بھی مخالفت کی تھی۔

اردوغان نے اپنے بیان کی وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ یہ قومی ضرورت تھی، ان کی کوئی ذاتی ضرورت یا مفاد نہیں تھا۔

اطلاعات ہیں کہ صدر طیب رجب اردوغان سے اختلافات کے باعث احمد داؤد اوغلو نے اپنے عہدے سے مستعفی ہونے کا فیصلہ کیا تھا۔

تاہم اپنی تقریر میں داؤد اوغلو نے کہا تھا کہ وہ صدر اردوغان کی حمایت جاری رکھیں گے اور ان کو کسی پر غصہ نہیں ہے۔

جسٹس پارٹی کے اجلاس میں نئے وزیر اعظم کا انتخاب کیا جائے گا۔

جماعت کی کانگریس کا اجلاس 22 مئی کو رکھا گیا ہے۔ یہ اجلاس وزیر اعظم کی کانگریس کی ایگزیکٹیو کمیٹی سے ملاقات کے بعد رکھا گیا ہے۔

صدر اردوغان اور وزیر اعظم داؤد اوغلو کے درمیان بدھ کو ملاقات ہوئی تھی جس کے بعد سے دونوں کے اختلافات کے بارے میں قیاس آرائیاں کی جا رہی تھیں۔

وزیر اعظم کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ صدر اردوغان ترکی میں صدارتی نظام حکومت لانا چاہتے ہیں جبکہ وزیر اعظم اس منصوبے کے خلاف ہیں۔

جمہوریہ ترکی

دارالحکومت انقرہ

  • آبادی سات کروڑ 87 لاکھ

  • رقبہ مربع کلومیٹر779,452

  • بڑی زبانیں ترکی اور کردستانی

  • مذہب اسلام

  • کرنسی ترکی لیرا

Getty Images