شامی شہر ديرالزور میں ہسپتال پر دولتِ اسلامیہ کا حملہ

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption دولتِ اسلامیہ کا صوبہ دير الزور کے بیشر علاقوں پر قبضہ ہے

شام کے شہر دير الزور میں خود کو دولتِ اسلامیہ کہنے والی شدت پسند تنظیم کے ایک ہسپتال پر حملے میں کم از کم حکومت کے حامی 20 جنگجو ہلاک ہو گئے ہیں جبکہ طبی عملے کے متعدد ارکان کو یرغمال بنا لیا ہے۔

شام میں کام کرنے والے حقوق انسانی کے کارکنوں کے مطابق سنیچر کو دير الزور کے مغرب میں واقع الاسد ہسپتال اور اس کے اطراف پر دولتِ اسلامیہ کے شدت پسندوں نے حملہ کیا۔

*روس، شام میں نئی چڑھائی کو تیار ہے؟

برطانوی خبر رساں ایجنسی روئٹرز نے برطانیہ میں شام کی صورتحال پر نظر رکھنے والی تنظیم سیرئین آبرویٹری اور سرکاری ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ حکومت فورسز نے ہسپتال پر دوبارہ کنٹرول حاصل کر لیا ہے۔

تاہم ابھی تک ہسپتال سے یرغمال بنائے جانے والے افراد کی تعداد کے بارے میں معلوم نہیں ہو سکا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption دیر الزور کے زیادہ تر حصے پر اس وقت دولتِ اسلامیہ کا قبضہ ہے

روئٹرز نے ہلاک ہونے والے سکیورٹی اہلکاروں کی تعداد 35 بتائی ہے جبکہ سیرئین آبرویٹری کے مطابق سکیورٹی سے جھڑپوں میں دولتِ اسلامیہ کے 24 شدت پسند بھی ہلاک ہو گئے ہیں۔

خیال رہے کہ دولتِ اسلامیہ کا صوبہ دير الزور کے بیشر علاقوں پر قبضہ ہے اور اس نے تقریباً دو برس سے دير الزور شہر کا محاصرہ کر رکھا ہے تاکہ شہر میں حکومت کے زیر کنٹرول بچ جانے والے علاقوں پر قبضہ کیا جا سکے۔

سیئرین آبزرویٹری فار ہیومن رائٹس کے مطابق اب شہر کا تقریباً 60 فیصد حصہ دولت اسلامیہ کے قبضے میں ہے جبکہ ڈھائی لاکھ کے قریب افراد شہر میں محصور ہو کر رہ گئے ہیں۔

اس وقت شام کے زیادہ تر علاقوں میں حکومت اور باغیوں کے درمیان جنگ بندی جاری ہے تاہم اس میں دولتِ اسلامیہ اور القاعدہ سے منسلک شدت پسند گروہ النصرہ فرنٹ شامل نہیں ہیں اور ان کے خلاف کارروائیاں جاری ہیں

اسی بارے میں