ڈونلڈ ٹرمپ نے’اپنا ترجمان خود‘ والے ٹیپ کو مسترد کر دیا

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption ڈونلڈ ٹرمپ نے خود کی ترجمانی والے ایک ٹیپ کو مسترد کردیا ہے

امریکہ میں رپبلکن پارٹی کے صدارتی امیدوار بننے کے خواہشمند ڈونلڈ ٹرمپ نے سنہ 1990 کی دہائی میں شائع ہونے والے ایک آڈیو ٹیپ میں خود کو اپنا ترجمان ظاہر کرنے کو مسترد کر دیا ہے۔

امریکی اخبار دی واشنگٹن ٹائمز کا کہنا ہے کہ اس نے سنہ 1991 کی ایک ایسی آڈیو ٹیپ حاصل کی ہے جس کے مطابق فون پر ہونے والی گفتگو میں پی آر مینیجر خود کو جان ملر بتا رہا ہے تاہم آواز سے وہ ڈونلڈ ٹرمپ کی طرح لگتا ہے۔

ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا ہے ٹیپ میں سنائی دینے والی آواز ان کی نہیں ہے۔

ڈونلڈ ٹرمپ کو ان کے کریئر کے آغاز میں باقاعدگی کے ساتھ کور کرنے والے صحافیوں کا کہنا ہے کہ ٹیپ میں سنائی دینے والی آواز باکل ڈونلڈ ٹرمپ جیسی ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ وہ ’ترجمان‘ جن کا نام جان ملر یا جان بیرن بتایا جا رہا ہے، سے یہی سنتے تھے جب وہ ڈونلڈ ٹرمپ کا انٹرویو کرنا چاہتے تھے۔

واضح رہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ کو اپنی جماعت کے ایک درجن سے زائد رپبلکن حریفوں کو وائٹ ہاؤس کی دوڑ سے باہر کر دینے کے بعد ممکنہ رپبلکن امیدوار کے طور پر دیکھا جا رہا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption انھوں نے کہا کہ فون پر ان کی آواز نہیں ہے

واشنگٹن ٹائمز کی خبر پر جمعے کو ٹو ڈے شو میں اپنا ردِ عمل ظاہر کرتے ہوئے ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا تھا کہ وہ اس کے بارے میں کچھ بھی نہیں جانتے ہیں۔

ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا تھا ’ آپ مجھے اس آڈیو ٹیپ کے بارے میں پہلی بار بتا رہے ہیں اور اس میں سنائی دینے والی آواز میری آواز سے بالکل بھی نہیں ملتی ہے۔‘

انھوں نے کہا کہ میرے پاس ایسے متعدد افراد ہیں جو میری آواز کی نقل اتارنے کی کوشش کر رہے ہیں اور آپ اس کا تصور کر سکتے ہیں۔

ان کے مطابق آڈیو ٹیپ میں سنائی دی جانے والی آواز انھی دھوکوں کی طرح ایک دھوکا ہے۔

اسی بارے میں