ریفرنڈم کے اثرات اگلے پانچ برس میں سامنے آئیں گے: چین

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption 2005 سے 2015 کے درمیان چین برطانیہ میں تقریباً 30 کھرب ڈالر کی سرمایہ کاری کر چکا ہے

چین کے معاشی ماہرین نے خبردار کیا ہے کہ برطانیہ کا یورپی یونین چھوڑنے کا فیصلہ عالمی معیشت پر اثر ڈالے گا۔

چین کے وزیرِ خزانہ لوجیوی نے کہا ہے کہ اس فیصلے کے مضمرات اور اثرات اگلے پانچ سے دس برس میں سامنے آئیں گے۔

٭ برطانیہ کا اخراج، یورپی یونین نے طریقہ کار واضح کر دیا

٭ لاکھوں افراد کا دوبارہ ریفرینڈم کروانے کا مطالبہ

٭ برطانیہ کے بغیر یورپی یونین کیسی لگے گی؟: دیکھیے

چین کے مرکزی بینک کی مانیٹری پالیسی کی کمیٹی کے رکن ہوانگ ژپنگ کے بقول برطانیہ کی جانب سے یورپی یونین کو خیرباد کہنا عالمگیریت کے اختتام کا نقطہ آغاز ثابت ہو سکتا ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ اگر ایسا ہوا تو یہ چین اور دنیا کے مفاد کے خلاف ہوگا۔

بین الاقوامی قانونی فرم ’بیکر اینڈ میکنزی‘ کے مطابق گذشتہ برس برطانیہ میں چین نے تین اعشاریہ تین ارب ڈالر کی براہ راست سرمایہ کاری کی تھی۔

سنہ 2005 سے 2015 کے درمیان چین برطانیہ میں تقریباً 30 ارب ڈالر کی سرمایہ کاری کر چکا ہے۔

خیال رہے کہ گذشتہ برس چین کے صدر شی جن پنگ کے دورہ برطانیہ کے موقعے پر وزیرِاعظم ڈیوڈ کیمرون نے 40 ارب پاؤنڈ کے دو طرفہ معاہدوں کا اعلان کیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ epa
Image caption عالمی منڈی میں غیر یقینی کی صورتحال کی وجہ سے دنیا بھر کے حصص بازاروں پر منفی اثرات مرتب ہو رہے ہیں

چینی وزیرِ خارجہ کے بقول ریفرنڈم کا نتیجہ عالمی معیشت پر اثرانداز ہوگا تاہم یہ اثرات کیا ہوں گے اس بات کی پیشنگوئی کرنا مشکل ہے۔

ان کا مزید کہنا ہے کہ ریفرینڈم کے بعد عالمی منڈی میں گراوٹ ضرورت سے زیادہ ردِعمل تھا۔ ’عالمی مارکیٹس کا ردِ عمل شاید زیادہ تھا ، صورتحال کا ٹھنڈے دل سے غیر جانبدارانہ جائزہ لینے کی ضرورت ہے۔‘

یاد رہے کہ برطانیہ کی جانب سے یورپی یونین سے علیحدگی کے حق میں ووٹ دینے کے بعد برطانوی پاؤنڈ کی قدر میں دس فیصد تک کمی ہوئی تھی اور ڈالر کے مقابلے میں پاؤنڈ ایک اعشاریہ 33 سینٹس پر آ گیا تھا جو سنہ 1985 کے بعد سے پاؤنڈ کی کم ترین سطح ہے۔

جاپانی ین کے مقابلے میں بھی پاؤنڈ کی قدر میں گیارہ اعشاریہ چار فیصد کمی دیکھنے میں آئی ہے۔ جاپان نے اس بات کا اشارہ دیا ہے کہ وہ ین کی قدر میں اضافے کو روکنے کے لیے اقدامات کر سکتا ہے۔

عالمی منڈی میں غیر یقینی کی صورتحال کی وجہ سے دنیا بھر کے حصص بازاروں پر منفی اثرات مرتب ہو رہے ہیں۔

اتوار کو سعودی عرب کی سٹاک ایکسچینج میں تین اعشاریہ سات فیصد گراوٹ آئی ہے۔

اسی بارے میں