برطانوی مارکیٹ میں بھی پاؤنڈ کی قیمت میں گراوٹ

تصویر کے کاپی رائٹ Getty

برطانیہ کے یورپی یونین سے علیحدگی کے فیصلے کے بعد پیر کو برطانیہ کے بازارِ حصص میں بھی پاؤنڈ کی قیمت کم ہوئی ہے۔

پیر کو برطانیہ کی بینچ مارک شیئر انڈیکس 0.8 فیصد کمی کے ساتھ کھلی جب کہ ڈالر کے مقابلے میں پاؤنڈ کی قیمت میں کمی دیکھنے میں آئی۔

فٹ سی 100 انڈیکس 0.8 فیصد کی کمی کے ساتھ 6,092.19 پوائنٹس پر رہی۔

٭ ریفرینڈم کے بعد برطانوی بازارِ حصص میں شدید مندی

٭ پاکستانی مارکیٹ سے پاؤنڈ اور یورو غائب

برطانیہ میں جمعے کو ایک موقعے پر انڈیکس آٹھ فیصد سے زائد تک گر گئی تھی تاہم مارکیٹ کے بند ہونے تک اس نے کچھ استحکام دیکھنے میں آیا۔

جمعے کو جب بازارِ حصص بند ہوئے تو اس وقت ڈالر کے مقابلے میں پاؤنڈ 1.3463 یعنی تقریباً دو فیصد کم قیمت پر اور یورو کے مقابلے میں یہ 1.2170 یعنی تقریباً 1.2 فیصد کم قیمت پر دستیاب تھا۔

جمعے کو ڈالر کے مقابلے پاؤنڈ کی قیمت میں ریکارڈ گراوٹ آئی تھی اور ایک وقت شرحِ تبادلہ 1.3236 تک چلی گئی تھی۔

ادھر برطانوی چانسلر جارج اوسبورن نے سٹاک مارکیٹ کھلنے سے پہلے ایک بیان میں کہا ’برطانیہ مستقبل کا سامنا کرنے کے لیے تیار ہے۔‘

انھوں نے اشارہ دیا کہ برطانیہ میں فوری طور پر ہنگامی بجٹ کے آنے کا امکان نہیں ہے۔

اوسبورن نے کہا ہے کہ برطانیہ کی معیشت میں ابھی بھی ایڈجسٹمنٹ (مطابقت پیدا کرنے) کی ضرورت ہے تاہم انھوں نے کہا اس قسم کا کوئی قدم اٹھانے سے قبل یہ بہت معقول ہے کہ نئے وزیر اعظم کا انتظار کیا جائے۔

اس سے پہلے برطانیہ کے یورپی یونین سے علیحدگی کے فیصلے کے بعد پیر کو ایشیائی بازارِ حصص میں پاؤنڈ کی قیمت میں مزید کمی ہوئی۔

جمعے کو جب بازارِ حصص بند ہوئے تو اس وقت ڈالر کے مقابلے میں پاؤنڈ 1.3365 یعنی تقریباً تین فیصد کم قیمت پر اور یورو کے مقابلے میں یہ 1.2147 یعنی تقریباً 1.4 فیصد کم قیمت پر دستیاب تھا۔

Image caption برطانوی چانسلر جارج اوسبورن نے سٹاک مارکیٹ کھلنے سے پہلے ایک بیان میں کہا ’برطانیہ مستقبل کا سامنا کرنے کے لیے تیار ہے‘

جمعے کو ڈالر کے مقابلے پاؤنڈ کی قیمت میں ریکارڈ گراوٹ آئی تھی اور ایک وقت شرحِ تبادلہ 1.3236 تک چلی گئی تھی۔

یہ 1985 کے بعد ڈالر کے مقابلے میں برطانوی پاؤنڈ کی سب سے کم قدر تھی۔

ادھر حکام ایشیا کے بازارِ حصص کو بھی مستحکم رکھنے کے لیے اقدامات کر رہے ہیں۔

جاپان کے وزیرِ خزانہ تارو آسو نے ملک کے وزیرِ اعظم شنزو کے ساتھ ہنگامی ملاقات کے بعد بتایا کہ انھیں وزیرِ اعظم نے ہدایت دی ہے کہ ضرورت پڑنے پر سٹاک مارکیٹس کو مستحکم رکھنے کے لیے اقدامات کیے جائیں۔

ان کا کہنا تھا کہ ’ سٹاک مارکیٹس میں خوف اور غیر یقینی کی صورتِ حال ہے۔‘

جمعے کو جاپان کے بینچ مارک شیئر انڈیکس میں تقریباً آٹھ فیصد کی گراوٹ کے بعد نکی 225 میں پیر کو 1.3 فیصد کا اضافہ دیکھا گیا۔

چین کے مرکزی بینک نے یو آن کی سرکاری قیمت میں 0.9 فیصد کمی کر دی جو گذشتہ سال اگست کے بعد سے سب سے بڑا اقدام تھا۔

سٹینڈرڈ اینڈ پوررز ڈو جانز ایڈیسز کے مطابق برطانیہ میں جمعرات کو یورپی یونین کو چھوڑنے کے حق میں فیصلے کے بعد دنیا کی سٹاک مارکیٹوں میں مندے کا رحجان دیکھنے میں آیا۔

اسی بارے میں