صدر کے’حکم‘ پر بیلاروسیوں نےکپڑے اتار دیے

تصویر کے کاپی رائٹ INSTAGRAM
Image caption سوشل میڈیا پر تصاویر میں لوگوں کا کہنا تھا کہ ہم نے صدر کے حکم کی تعمیل کی ہے

بیلاروس کے صدر الیکساندر لوکاشینکو نے اپنے عوام سے پر زور اپیل کی کہ ’وہ کپڑے اتار دیں اور پسینہ آنے تک سخت محنت سے کام کریں۔‘

ان کی اپیل کے پس منظر میں ملک میں جاری بدترین معاشی حالات تھے۔ ملک میں بے روزگاری انتہا پر ہے اور ایسے میں سخت محنت ہی بحالی کا واحد راستہ ہے۔

لیکن صدر کی اپیل کے چند دن بعد ملک کے کئی باشندوں نے اس اپیل پر سچ مچ عمل کر ڈالا۔

جو بات صدر نے مثال کے لیے استعمال کی، لوگوں نے اسے عملی جامہ پہنا کر دکھا دیا اور سچ مچ میں دفاتر اور کام کی جگہوں پر بےلباس ہو کر تصاویر سوشل میڈیا پر شریک کر دیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ INSTAGRAM
Image caption لوگ صدر کی ہدایت پر عمل کرتے ہوئے
تصویر کے کاپی رائٹ INSTAGRAM
تصویر کے کاپی رائٹ Belarusians naked

صدر لوکاشینکو کو ان کے ملک کے لوگوں مقامی زبان میں انھیں باتسکا یعنی والد کہتے ہیں۔

درجنوں لوگوں نے اپنی بنا کپڑوں کے تصاویر getnakedandwork# کے ہیش ٹیگ کے ساتھ سوشل میڈیا پر شریک کیں۔

یہ بات تصاویر پر ہی ختم نہیں ہوئی بلکہ صدر کے پیغام کے بارے میں مزاحیہ گانے بھی بنائے گئے۔

ہفتے کے آخر تک یہ ہیش ٹیگ بیلاروس سے باہر بھی استعمال ہونے لگا۔ روس، یوکرین اور بلقان کی ریاستوں میں بھی لوگوں نے دفاتر میں بےلباس ہو کر تصاویر سوشل میڈیا پر ڈالیں۔

اس کی ایک وجہ شاید یہ بھی ہو سکتی ہے کہ اس علاقے میں سخت گرمی پڑ رہی ہے، جس کی وجہ سے کئی لوگوں کو موقع مل گیا۔

اسی بارے میں