روس اور ترکی کا تعلقات کی بحالی پر اتفاق

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

روس کے جنگی جہاز کو مار گرانے پر پیدا ہونے والے سفارتی تنازع کے بعد پہلی بار روسی صدر ولادی میر پوتن اور ترکی کے صدر رجب طیب اردوغان نے ٹیلی فون پر بات کی ہے۔

رواں ہفتے ہی ترکی کے صدر رجب طیب اردوغان نے روس کا جنگی طیارہ مار گرانے پر روس سے معافی مانگی تھی۔

٭ طیارہ گرانے پر ترکی کی روس سے معذرت

صدر اردوغان کے دفتر کے مطابق ٹیلی فون پر روسی صدر پوتن سے بات چیت پر دونوں رہنماؤں نے ایک دوسرے ملاقات کرنے پر اتفاق کیا۔

صدر پوتن نے اس موقعے پر استنبول کے اتاترک ایئر پورٹ پر ہونے والے حملے کو نفرت انگیز قرار دیا۔

صدر رجب طیب اردوغان کے ترجمان کے مطابق دونوں ممالک کے درمیان تعلقات کو پہنچنے والے نقصان کی اصلاح کے لیے مناسب اقدامات اٹھائے جائیں گے اور روسی شہریوں پر ترکی کے سفر پر عائد پابندیوں کے خاتمے کے لیے کام کیا جائے گا۔

ترجمان نے مزید کہا ہے کہ دونوں رہنماؤں نے ایک دوسرے سے رابطے میں رہنے اور ملاقات کرنے پر رضامندی ظاہر کی اور باہمی تعلقات کی ازسرنو بحالی کا عزم کیا۔

ترجمان کے مطابق ترکی کے صدر نے روسی صدر ولادمیر پوتن کے نام پیغام بھیجا ہے جس میں انھوں نے تباہ ہونے والے روسی طیارے کے پائلٹ کے خاندان والوں سے ہمدری اور تعزیت کا اظہار کیا ہے۔

خیال رہے کہ گذشتہ سال نومبر میں ترکی نے شام کی سرحد کے ساتھ ایک روسی جنگی طیارے کو ترکی کی فضائی حدود کی مبینہ خلاف ورزی پر تباہ کر دیا تھا۔

ترکی کے حکام نے اس وقت کہا تھا کہ روسی طیارے نے پانچ منٹ میں دس مرتبہ ترکی کی فضائی حدود کی خلاف ورزی کی تھی اور اس کو اس بارے میں خبردار بھی کیا گیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption شام میں تعینات روس کے جنگی جہاز کو حدود کی مبینہ خلاف ورزی پر ترکی نے مار گرایا تھا

روسی وزارتِ دفاع کا کہنا تھا کہ طیارے نے ترکی کی فضائی حدود کی خلاف ورزی نہیں کی تھی اور شام کی فضائی حدود ہی میں پرواز کر رہا تھا۔

اس واقع پر ترکی نے روس سے معافی مانگے سے انکار کر دیا تھا جس پر دونوں ملکوں کے درمیان کشیدگی پیدا ہو گئی تھی۔

روس نے اس واقعہ کے بعد ترکی پر تجارتی پابندیاں عائد کر دی تھی اور روسی سیاحوں کے ترکی جانے پر بھی پابندیاں لگا دی تھیں۔

اس وقت روس کے صدر ولادمیر پوتن نے کہا تھا کہ جب تک روس سے معافی نہیں مانگی جائے گی تجارتی پابندیں نہیں اٹھائی جائیں گی۔

رواں ہفتے ترکی کے صدر کی جانب سے معافی مانگنے کی تصدیق کرتے ہوئے روس کے صدارتی دفتر کے ترجمان نے کہا تھاکہ اردوغان نے اپنے پیغام میں جو کچھ ہوا اس پر دلی معذرت کا اظہار کرتے ہوئے روس سے اپنے تعلقات بحال کرنے کی خواہش کا بھی اظہار کیا۔

اسی بارے میں